تاریخ شائع کریں2022 5 December گھنٹہ 13:44
خبر کا کوڈ : 575832

یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس پر ملک کے اعلیٰ فوجی حکام کی جاسوسی کا الزام

اخبار نے مزید کہا کہ دیگر اہم شخصیات جن میں متعدد تاجر، یورپی پارلیمنٹ کے ایک یونانی رکن اور متعدد صحافی شامل ہیں، کو بھی یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس نے نشانہ بنایا ہے۔
یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس پر ملک کے اعلیٰ فوجی حکام کی جاسوسی کا الزام
ایک یونانی اخبار نے اطلاع دی ہے کہ یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس (EYP) نے وزیر اعظم کیریاکوس میتسوتاکیس کے حکم پر متعدد اعلیٰ فوجی حکام کی جاسوسی کی۔

یونانی اخبار Documento نے 14 افراد کی فہرست شائع کی ہے جن کی مبینہ طور پر یونانی خفیہ ایجنسی نے پریڈیٹر جاسوسی سافٹ ویئر کے ذریعے جاسوسی کی تھی۔

اس اخبار کے مطابق یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس ملک کے اعلیٰ فوجی حکام کی نگرانی کر رہی ہے، جن میں یونانی نیشنل ڈیفنس کے چیف آف دی جنرل سٹاف کنستانتینوس فلوروس اور یونانی فوج کے چیف آف دی جنرل سٹاف شامل ہیں۔

اخبار نے مزید کہا کہ دیگر اہم شخصیات جن میں متعدد تاجر، یورپی پارلیمنٹ کے ایک یونانی رکن اور متعدد صحافی شامل ہیں، کو بھی یونان کی نیشنل انٹیلی جنس سروس نے نشانہ بنایا ہے۔

یونان کی سرکردہ اپوزیشن جماعتوں میں سے ایک، سریزا نے فہرست کی اشاعت کے بعد اعلان کیا کہ اس نے وزیر اعظم سے ڈوکومینٹو اخبار کی رپورٹ پر تبصرہ کرنے کو کہا ہے، اور اسکینڈل کو یونانی تاریخ کا سیاہ ترین لمحہ قرار دیا ہے۔

دوسری جانب یونانی حکومت کے ترجمان  نے اخبار Documento پر تنقید کرتے ہوئے اس رپورٹ کو بے بنیاد دعوؤں کی تالیف قرار دیا۔

یہ رپورٹ ایسے وقت میں شائع کی گئی ہے جب یونانی حکومت چند ماہ قبل یورپی پارلیمنٹ کے رکن اور یونانی اپوزیشن جماعت  کے رہنما نیکوس اینڈرولیکس کی وائر ٹیپنگ کا اعتراف کرنے کے بعد ایک معلوماتی اسکینڈل میں ملوث تھی۔ یونانی نیشنل انٹیلی جنس سروس

حالیہ ہفتوں میں، Documento نے مبینہ طور پر یونانی انٹیلی جنس سروسز کی نگرانی میں لوگوں کی چار فہرستیں شائع کی ہیں۔ ان فہرستوں میں موجودہ حکومت کے وزراء جیسے وزیر داخلہ اکیس اسکروٹوس اور وزیر خارجہ نکوس ڈینڈیا سے لے کر سابق وزیر اعظم انتونیس سماراس اور دیگر حکام تک کی اہم شخصیات شامل ہیں۔
https://www.taghribnews.com/vdcjtiei8uqeaoz.3lfu.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس