تاریخ شائع کریں2022 4 December گھنٹہ 18:28
خبر کا کوڈ : 575719

صیہونی حکومت نے آزادی ٹنل کے 6 قیدیوں کی عدالتی کارروائی ملتوی کر دی

فلسطینی قیدیوں کے انفارمیشن آفس نے اس اتوار کو اعلان کیا کہ یہ اجلاس اس ماہ کی 6 تاریخ کو الناصره کی مرکزی عدالت میں ہونا تھا، لیکن اسے 10 جنوری تک ملتوی کر دیا گیا۔
صیہونی حکومت نے آزادی ٹنل کے 6 قیدیوں کی عدالتی کارروائی ملتوی کر دی
مرکزاطلاعات فلسطین نے آزادی ٹنل کے 6 قیدیوں کے مقدمے کی سماعت ملتوی کرنے کا اعلان کیا جو اس ماہ کی 6 تاریخ (منگل) کو ہونا تھا۔

فلسطینی قیدیوں کے انفارمیشن آفس نے اس اتوار کو اعلان کیا کہ یہ اجلاس اس ماہ کی 6 تاریخ کو الناصره کی مرکزی عدالت میں ہونا تھا، لیکن اسے 10 جنوری تک ملتوی کر دیا گیا۔

گزشتہ جولائی میں بورڈ آف پریزنرز اینڈ فریڈمین آف فلسطین کے متعدد وکلاء نے آزادی ٹنل کے 6 قیدیوں کے خلاف سنائی گئی سزا پر نظرثانی کا مطالبہ کیا تھا۔

گذشتہ 22 مئی کو اسرائیلی عدالتوں نے ان 6 فلسطینی قیدیوں کو پانچ سال قید اور پانچ ہزار شیکل (صیہونی حکومت کی کرنسی) کے مالی جرمانے کی سزا سنائی تھی۔

یہ سزائیں جلبوع جیل سے فرار ہونے پر ان کے خلاف انتقامی کارروائی کی وجہ سے جاری کی گئیں۔

واضح رہے کہ 6 ستمبر 2021 «محمود العارضه»، «محمد العارضه»، «ایهم کممجی»، «یعقوب غوادره»، «محمود ابو شیرین» و «ایاد جرادات»  نامی 6 فلسطینی قیدی سرنگ کھود کر فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے تھے۔ لیکن آخر کار رہائی کے دو ہفتے بعد، صہیونی قابضین نے انہیں دوبارہ گرفتار کر کے قید کر دیا۔

صیہونی حکومت کی محفوظ ترین جیلوں میں سے ایک سے فلسطینی قیدیوں کا فرار فلسطینی رائے عامہ میں وسیع عکاسی کرتا تھا اور صیہونی حکومت کے قبضے سے نکلنے کی امید کی علامت بن گیا تھا۔

فلسطینی انسانی حقوق کے ذرائع نے بتایا ہے کہ صیہونی حکومت کی جیلوں میں چار ہزار سے زائد فلسطینی قیدی ہیں۔
https://www.taghribnews.com/vdcdfk0knyt0556.432y.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس