تاریخ شائع کریں2022 3 December گھنٹہ 09:02
خبر کا کوڈ : 575461

روس کو یوکرین کی جنگ میں استعمال کے لیے ایران نے ہتھیار نہیں دیئے

یہ بات حسین امیرعبداللہیان نے جمعہ کے روز اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل آنٹونیو گوتریش کے ساتھ ایک ٹیلی فونگ رابطے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
روس کو یوکرین کی جنگ میں استعمال کے لیے ایران نے ہتھیار نہیں دیئے
 ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ یوکرین میں جنگ کی جڑیں نیٹو کی مشرق میں توسیع کی غلط پالیسی میں پیوست ہیں، ایران کی جانب سے روس کو یوکرین کی جنگ میں استعمال کے لیے ہتھیار بھیجنے کا دعویٰ بے بنیاد الزام ہے۔

یہ بات حسین امیرعبداللہیان نے جمعہ کے روز اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل آنٹونیو گوتریش کے ساتھ ایک ٹیلی فونگ رابطے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے الزام کو بے بنیاد سمجھتے ہوئے روس کو یوکرین کی جنگ میں استعمال ہونے والا کوئی ہتھیار نہیں دیا۔

امیرعبداللہیان نے ایران میں ہونے والی ملکی پیش رفت کا ذکر کرتے ہوئے، امریکہ اور چند مغربی ممالک کی جانب سے غلط معلومات اور بین الاقوامی میکانزم کا جان بوجھ کر غلط استعمال کرتے ہوئے ایران میں فسادات اور قتل و غارت گری کو ہوا دینے کے اقدامات پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ تہران سفارت کاری اور مذاکرات کو بہترین آپشن سمجھتا ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران دوسرے آپشنز کے خلاف کبھی بھی تنگ نہیں ہو گا۔

گوتریش نے علاقائی مذاکرات کو جاری رکھنے کے لیے اپنی کوششوں پر زور دیا اور اس سمت میں اسلامی جمہوریہ ایران کے تعاون اور تعمیری کردار کو سراہا۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ یوکرین میں جنگ کو روکنے کے لیے تہران کی کوششیں جنگ بندی اور مسئلے کے حل کا باعث بنیں گی۔

انہوں نے اسلامی جمہوریہ ایران کی جانب سے اندر ہونے والے واقعات سے نمٹنے کے لیے ایک قومی کمیٹی کی تشکیل کے اقدام کو ایک اچھا قدم قرار دیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ خطے اور دنیا کے مسائل کے حل کے لیے بات چیت اور سفارت کاری ہی صحیح راستہ ہے۔

انہوں نے یمن کے سیاسی بحران کے حل میں اسلامی جمہوریہ ایران کے کردار کو سراہا اور اس میدان میں ایران کے کردار کو جاری رکھنے کی ضرورت پر زور دیا۔

دونوں فریقین نے بعض علاقائی اور بین الاقوامی مسائل بشمول یوکرین، یمن اور ایران مخالف پابندیوں کے خاتمے پر بات چیت پر تبادلہ خیال کیا۔
https://www.taghribnews.com/vdch-mnmz23nqkd.4lt2.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس