تاریخ شائع کریں2022 3 October گھنٹہ 18:22
خبر کا کوڈ : 567645

شامی فوج کے ہاتھوں النصرہ فرنٹ دہشت گرد گروہ کے آپریشن روم کو تباہ کر دیا گیا

علاقے میں جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کے جواب میں شامی فوج نے اس ملک کے شمال مغرب میں واقع "ڈی ایسکلیشن" علاقے میں النصرہ فرنٹ دہشت گرد گروہ کے ٹھکانوں کو تباہ کر دیا۔
شامی فوج کے ہاتھوں النصرہ فرنٹ دہشت گرد گروہ کے آپریشن روم کو تباہ کر دیا گیا
علاقے میں جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کے جواب میں شامی فوج نے اس ملک کے شمال مغرب میں واقع "ڈی ایسکلیشن" علاقے میں النصرہ فرنٹ دہشت گرد گروہ کے ٹھکانوں کو تباہ کر دیا۔

ایک فیلڈ فوجی اہلکار نے شام کے اخبار الوطن کو انٹرویو دیتے ہوئے اس بات کا اعلان کرتے ہوئے مزید کہا کہ فوج نے ادلب کے جسر الشغور کے مضافات میں حلوز و کفریدین کے محور کو تباہ کر دیا کیونکہ مضافات میں کبانی محور تک دہشت گردوں کی سپلائی لائن تھی۔ لاذقیہ کا اس کے علاوہ شامی فوج کے یونٹوں نے البدیع علاقے کے مشرق میں داعش دہشت گرد گروہ کے بہت سے عناصر کو ہلاک کر دیا۔

مذکورہ اہلکار نے کہا: یہ اس وقت ہے جب قابض ترک فوج نے السکہ کے مضافات کے خلاف اپنی جارحانہ کارروائیوں کا دوبارہ آغاز کیا ہے اور حلب کے شمالی مضافات میں داغے گئے میزائل سے ایک ترک فوجی ہلاک ہو گیا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی: کل صبح حما کے شمالی مضافات میں تعینات فوجی یونٹوں کے توپ خانے نے دشت الغاب کے شمال مغرب میں واقع قالدین، عنکوی اور شیخ سندیان میں دہشت گردوں کو آگ لگا دی اور مضافات میں تعینات فوجی یونٹوں کو نشانہ بنایا۔ ادلب نے الفطیرہ میں جبہۃ النصرہ کے مسلح ہیڈکوارٹر پر بھی گولہ باری کی اور ادلب کے جنوبی مضافات میں جبل الزاویہ کے علاقے میں فلیفل، سفوفان، سان، بنین اور ہرش بنین کو توپ خانے سے گولی مار دی۔

انہوں نے تاکید کی: فوج کے حملے نشانہ بنائے گئے ٹھکانوں کو تباہ کرنے اور ان میں تعینات دہشت گردوں کو ختم کرنے کے اپنے مقاصد حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

الوطن اخبار کے ساتھ اپنے انٹرویو کے تسلسل میں مذکورہ اہلکار نے مزید کہا: کل البادیہ کے مشرق میں تعینات فوجی یونٹوں نے اپنی زمینی کارروائیوں کو جاری رکھتے ہوئے کئی داعش کو ہلاک کیا اور تدمر بادیہ کے کچھ حصوں کو داعش کے عناصر سے پاک کر دیا۔ 

شامی اپوزیشن کے ذرائع ابلاغ نے یہ بھی بتایا کہ شامی فوج کے یونٹوں نے ادلب کے مغربی مضافات اور لطاکیہ کے مضافات کے درمیان سڑک پر واقع النصرہ فرنٹ کے آپریشن روم کو میزائلوں سے نشانہ بنایا۔

اس سلسلے میں شامی فوجیوں کے ایک گروپ نے الحسکہ شہر کے شمال مشرقی مضافات میں ایک چوکی پر امریکی فوجی قافلے کا راستہ روک دیا۔

بکتر بند گاڑیوں پر مشتمل یہ قافلہ السباط گاؤں کے راستے تل براق کے علاقے میں جانے کی کوشش کر رہا تھا لیکن شامی افواج کی مزاحمت کے باعث پسپائی پر مجبور ہو گیا۔

گذشتہ ہفتے ایک امریکی فوجی قافلہ الحسکہ کے شمال مغربی مضافاتی علاقے تل تمر کے نواحی گاؤں الغرجانہ کو عبور کرنے کی کوشش کر رہا تھا کہ اسے شامی افواج کی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا اور شامی فوج نے انہیں پسپائی پر مجبور کر دیا۔

شام کے مقامی ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ ملک کے مشرق میں تعینات امریکی افواج شام کے تیل اور اناج کی کھیپ ہمسایہ ممالک کو اسمگل کر رہی ہیں۔

شام کی تیل کی وزارت کے اعدادوشمار کے مطابق مشرقی علاقوں میں امریکی قابض افواج اور اس کے کرائے کے فوجی روزانہ 70 ہزار بیرل شامی تیل چوری کرتے ہیں۔

شامی حکومت نے بارہا اس بات پر زور دیا ہے کہ شام کے مشرق اور شمال مشرق میں امریکی افواج اور ان سے وابستہ افواج کا ملک کے تیل کو لوٹنے کے علاوہ کوئی اور مقصد نہیں ہے اور انہیں اس علاقے سے نکل جانا چاہیے۔

شام کے خلاف ایک دہائی کی جنگ کے دوران امریکہ نے دہشت گردی اور داعش کے خلاف جنگ کے بہانے اس ملک میں علیحدگی پسند ملیشیا کی حمایت کی ہے اور شام کے تیل سے مالا مال علاقوں پر قبضہ کر رکھا ہے۔

امریکی دہشت گرد فورسز نے کرد ڈیموکریٹک فورسز "کیو ایس ڈی" کی ملی بھگت سے گذشتہ مہینوں کے دوران الجزیرہ کے علاقے سے چوری شدہ شامی تیل لے جانے والے سیکڑوں ٹینکروں کو ہٹا کر فروخت کیا ہے۔
http://www.taghribnews.com/vdcc0mqpp2bqee8.c7a2.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس