تاریخ شائع کریں2022 15 August گھنٹہ 18:51
خبر کا کوڈ : 561611

مزاحمت اور تل ابیب کی بار بار ناکامیاں

مزاحمتی گروہوں نے خطے میں توازن کو تبدیل کر دیا ہے تاکہ ناجائز صیہونی ریاست خطے کے ممالک اور مزاحمتی گروہوں پر اپنی مرضی مسلط کرنے کے قابل نہ رہے۔
مزاحمت اور تل ابیب کی بار بار ناکامیاں
قائد اسلامی انقلاب حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فلسطین کی اسلامی جہاد تحریک کے سکریٹری جنرل زیاد النخالہ کے خط کے جواب میں تحریک کے آزادانہ داخلے کو تنازعات کے اس دور کی ایک الگ خصوصیت کے طور پر اجاگر کیا۔

انہوں نے فرمایا کہ آپ نے بہادرانہ مزاحمت کے ساتھ ناجائز صہیونی ریاست کی افراتفری سازشوں کو بے نقاب کرتے ہوئے ثابت کردیا کہ مزاحمت کا ہر ایک حصہ دشمن کو شکست دے سکتا ہے۔

مزاحمتی گروہوں نے خطے میں توازن کو تبدیل کر دیا ہے تاکہ ناجائز صیہونی ریاست خطے کے ممالک اور مزاحمتی گروہوں پر اپنی مرضی مسلط کرنے کے قابل نہ رہے۔

مقبوضہ فلسطین میں صیہونیوں کی فوجی قوتوں اور فلسطین کی اسلامی جہاد تحریک کے درمیان 5-8 اگست 2022 کو ایک تازہ تصادم ہوا جو مصر اور قطر کی جانب سے طے شدہ شرائط کے ساتھ جنگ ​​بندی کے لیے ثالثی کی کوششوں کے بعد ختم ہوا۔

ان تنازعات کے دوران 15 بچوں اور دو خواتین سمیت کم از کم 45 افراد ہلاک اور 96 بچوں، 30 خواتین اور 12 بوڑھوں سمیت 360 سے زائد زخمی ہوئے۔

گزشتہ 74 برسوں کے دوران، فلسطین میں تقریباً 10 جنگجو گروپ تشکیل دیے گئے ہیں، جن میں سے کچھ نے برسوں کی مسلح لڑائی کے بعد سیاسی سرگرمی کا رخ کیا ہے، تاہم، دوسرے گروپ  قبضے کو ختم کرنے، فلسطین کو آزاد کرانے اور بے گھر فلسطینیوں کو ان کے گھر واپس لانے کے لیے لڑتے رہتے ہیں۔

اسلامی مزاحمتی تحریک (حماس)، اسلامی جہاد تحریک، عوامی محاذ برائے آزادی فلسطین، جنرل کمانڈ، پاپولر فرنٹ فار لبریشن آف فلسطین اور پاپولر ریزسٹنس کمیٹی ان سرگرم گروپوں میں شامل ہیں، اب بھی صیہونی حکومت کے خلاف لڑ رہے ہیں۔

ناجائز صیہونی ریاست اور فلسطینیوں کے درمیان تنازعات اور جنگوں کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ ایک مزاحمتی گروپ حکومت کے ساتھ مسلح تصادم میں داخل ہوا ہے اور اس تنازع کو ختم کرنے کے لیے اپنی شرائط عائد کرنے میں کامیاب ہوا ہے۔

اس سے پہلے صیہونی ہمیشہ برتری حاصل کرتی تھی اور نئی زمینوں پر قبضے کے ذریعے تنازعات کو روکنے کے لیے حالات کا تعین کرتی تھی لیکن اس بار صورتحال مختلف ہے۔

تل ابیب مغربی تھنک ٹینکس کے مضامین کے ذریعے عالمی رائے عامہ کے سامنے اپنی ناکامی کو فتح کے طور پر بیچنے اور حالیہ تنازع میں فلسطینی مزاحمتی گروپوں کے درمیان اختلاف رائے کی تجویز دینے میں مصروف ہے، تاہم یہ سب ناجائز صیہونی ریاست کی کمزوری کی وجہ سے ہے کیونکہ اس کی رائے عامہ حکومت کے جھوٹے اہلکاروں کو جان چکی ہے۔

ناجائز صیہونی ریاست  آج داخلی اور خارجی دونوں محاذوں پر مزاحمتی گروہوں کے محاصرے میں ہے اور فلسطین پر قبضے کے بعد سے یہ ایک بے مثال صورت حال ہے جب کہ مغرب، امریکہ کی حمایت کی وجہ سے گزشتہ دہائیوں میں صیہونیوں کا غلبہ رہا ہے.

تاہم صیہونی اپنے اردگرد پھیلی کنکریٹ کی دیواروں اور خاردار تاروں کے باوجود مقبوضہ اراضی کے اندر مزاحمتی گروہوں میں گھری ہوئی ہے۔ ناجائز صیہونی ریاست کو اب ان گروہوں کی طاقت پر غور کرنا ہوگا کیونکہ اس حکومت کا فلسطین کے باہر سے لبنان، شام، عراق اور یمن کے گروہوں نے محاصرہ کیا ہوا ہے۔

صیہونیوں کی مساواتیں ماضی کی طرح مطلوبہ اہداف تک نہیں پہنچ سکتیں جو کہ کریش گیس فیلڈ کے ارد گرد ہونے والی حالیہ پیش رفت میں واضح طور پر دیکھی جا سکتی ہیں جہاں صیہونی لبنان کی حزب اللہ کے خلاف ناکام ثابت ہوئی۔

مزید برآں صیہونیوں کی پوری سرزمین مزاحمتی میزائلوں کی دسترس میں ہے اور حکومت آئرن ڈوم کی تنصیب پر بھاری اخراجات کے باوجود مقبوضہ سرزمین کا دفاع کرنے سے قاصر ہے۔ اگر دیگر گروپ پی آئی جے میں شامل ہوتے ہیں تو صیہونیوں کے لیے صورت حال مزید مشکل ہو جائے گی حتیٰ کہ تباہی کے دہانے پر پہنچ جائے گی۔

صیہونی حکام آج اچھی طرح جانتے ہیں کہ مزاحمتی گروپ خطے میں عرب حکومتوں کی طرح سیاسی ڈینگیں مارنے والے نہیں ہیں، کیونکہ وہ وہی کرتے ہیں جو وہ کہتے ہیں اور ان کی عملیت عرب حکومتوں کی سیاسی بوکھلاہٹ کے بالکل برعکس ہے۔

فلسطین میں موجودہ مزاحمتی گروپوں کے پاس ایسے لیڈر ہیں جو ہوشیار، مخلص، پرعزم اور سیاسی عمل کو کسی نتیجے پر پہنچنے سے مایوس اور جدید ترین فوجی ٹیکنالوجی سے لیس ہیں۔ وہ کسی بھی تنازعے میں ایسے نئے ہتھیاروں کی نقاب کشائی کرتے ہیں جن سے دشمن کو بھی خبر نہیں ہوتی۔

آخر میں، نئی صدی میں حالات بدل چکے ہیں اور ناجائز صیہونی ریاست خطے کے ممالک اور مزاحمتی گروہوں پر اپنی مرضی کا حکم نہیں دے سکتی اور اگر دیگر مزاحمتی گروہ اسلامی جہاد تحریک کے ساتھ مل جائیں تو یہ اور بھی نازک ہوگا۔
http://www.taghribnews.com/vdcjvveivuqemmz.3lfu.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس