تاریخ شائع کریں2022 15 August گھنٹہ 14:39
خبر کا کوڈ : 561570

یوکرین کی جنگ سے قبل روس میں سعودی شہزادے کی بڑی سرمایہ کاری

 فنانشل ٹائمز اخبار کی ویب سائٹ کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ سعودی ارب پتی "شہزادہ الولید بن طلال" نے یوکرین میں جنگ شروع ہونے سے چند روز قبل روسی کمپنیوں میں 500 ملین ڈالر سے زیادہ کی سرمایہ کاری کی تھی۔
یوکرین کی جنگ سے قبل روس میں سعودی شہزادے کی بڑی سرمایہ کاری
رپورٹس سے پتہ چلتا ہے کہ سعودی ارب پتی شہزادے "الولید بن طلال" نے یوکرین میں جنگ شروع ہونے سے کچھ عرصہ قبل روسی کمپنیوں میں 500 ملین ڈالر سے زیادہ کی سرمایہ کاری کی تھی۔

 فنانشل ٹائمز اخبار کی ویب سائٹ کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ سعودی ارب پتی "شہزادہ الولید بن طلال" نے یوکرین میں جنگ شروع ہونے سے چند روز قبل روسی کمپنیوں میں 500 ملین ڈالر سے زیادہ کی سرمایہ کاری کی تھی۔

رپورٹس بتاتی ہیں کہ شہزادہ الولید کی سرمایہ کاری کمپنی کنگڈم ہولڈنگ کمپنی کو تین بڑی روسی تیل کمپنیوں، گیزپروم، لوکوئیل اور روزنیفٹ کی جانب سے فروری میں جاری کردہ ڈپازٹری رسیدیں موصول ہوئی ہیں۔ روس نے 24 فروری کو یوکرین پر حملہ کیا۔

ابھی تک ان سرمایہ کاری کے لیے کوئی مخصوص تاریخ مقرر نہیں کی گئی ہے اور سعودی کمپنی نے خریدے گئے حصص کی ملکیت سے متعلق سوالات کا جواب نہیں دیا ہے۔ تاہم یہ واضح ہے کہ جنگ کے آغاز اور روس کے خلاف مغربی پابندیوں کے نفاذ کے بعد ان تمام سرمایہ کاری کی قدر میں تیزی سے کمی واقع ہوئی ہے۔

الولید، جن کے دادا جدید سعودی عرب کے بانی تھے، سعودی عرب کے امیر ترین آدمیوں میں سے ایک ہیں اور سب سے طویل عرصے تک قائم رہنے والے بین الاقوامی سرمایہ کار ہیں۔

2017 میں، شہزادہ الولید ان شخصیات میں شامل تھے جنہیں ریاض کے رٹز کارلٹن ہوٹل میں بڑے پیمانے پر گرفتاریوں کے بعد گرفتار کیا گیا جس کا مقصد بدعنوانی سے لڑنا تھا۔ تاہم، کوئی سرکاری الزامات درج نہ ہونے کی وجہ سے اسے 83 دن بعد رہا کر دیا گیا۔  

67 سالہ شہزادہ الولید سٹی گروپ اور ایپل جیسی کمپنیوں میں حصہ لینے کے بعد سب سے نمایاں سعودی سرمایہ کار بن گئے ہیں۔ وہ محمد بن سلمان کی اصلاحی کوششوں کے حامیوں میں سے بھی ہیں۔
http://www.taghribnews.com/vdcd5f0kzyt09k6.432y.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس