تاریخ شائع کریں2022 15 August گھنٹہ 14:21
خبر کا کوڈ : 561563

روس اور شمالی کوریا دوطرفہ تعلقات کو وسعت دینے کے خواہاں ہیں

اس خط میں پوٹن نے اعلان کیا کہ روس اور شمالی کوریا مشترکہ کوششوں کے ذریعے اپنے "جامع اور تعمیری تعلقات" کو وسعت دیں گے۔ 
روس اور شمالی کوریا دوطرفہ تعلقات کو وسعت دینے کے خواہاں ہیں
شمالی کوریا کے ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان کے نام ایک خط میں اعلان کیا ہے کہ دونوں ممالک اپنے دوطرفہ تعلقات کو وسعت دیں گے۔

اس خط میں پوٹن نے اعلان کیا کہ روس اور شمالی کوریا مشترکہ کوششوں کے ذریعے اپنے "جامع اور تعمیری تعلقات" کو وسعت دیں گے۔ 

شمالی کوریا کی "KCNA" خبر رساں ایجنسی نے بھی اعلان کیا کہ شمالی کوریا کے یوم آزادی کے موقع پر کم کو لکھے گئے اپنے خط میں پوتن نے کہا کہ قریبی تعلقات سے دونوں ممالک کو فائدہ پہنچے گا اور جزیرہ نما کوریا اور شمال مشرقی ایشیائی خطے کی سلامتی اور استحکام کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی۔

یوکرین پر روس کے حملے کے بعد ماسکو اور واشنگٹن کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کے درمیان شمالی کوریا نے حال ہی میں روس کے ساتھ اپنے تعلقات کو نمایاں کیا ہے۔ 

شمالی کوریا نے یوکرین کے بحران کی مذمت کی ہے جس کی وجہ امریکہ کی "تسلط پسندانہ پالیسی" اور "خفیہ نگاہ" ہے۔ 

روسی حملے کے جواب میں، ملک نے ایک بیان میں اعلان کیا کہ مشرقی یورپ میں امریکہ اور نیٹو کے اقدامات روس کی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں، جب کہ واشنگٹن یوکرین پر ممکنہ روسی حملے کے بارے میں "پرجوش افواہوں" کے ساتھ اپنے اقدامات کا جواز پیش کرتا ہے۔ 

ماسکو اور پیانگ یانگ کے درمیان تعلقات تاریخی ہیں اور سرد جنگ کے دوران سوویت یونین کو شمالی کوریا کا سب سے بڑا حامی سمجھا جاتا تھا۔ 1950 کی دہائی میں، ماسکو نے شمالی کوریا کے سائنسدانوں کو ملک کے جوہری ہتھیاروں کو تیار کرنے کے لیے ضروری علم حاصل کرنے میں مدد کی، اور 20ویں صدی کے آخر میں، اس نے شمالی کوریا کو باقاعدگی سے فوجی امداد اور ہتھیار فراہم کیے، اس طرح یہ ملک کے لیے ایک اہم شراکت دار بن گیا۔ 
http://www.taghribnews.com/vdcfvydtmw6dvta.k-iw.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس