تاریخ شائع کریں2021 25 September گھنٹہ 14:29
خبر کا کوڈ : 520196

ہندوستان میں مسلمان شہری کی لاش پر چھلانگ لگانے کی ویڈیو

ویڈیو میں مہم کو کور کر رہا کیمرہ مین اسے پولیس فائرنگ میں مارے گئے ایک شخص کی لاش پر چھلانگ لگاتے ، لات مارتے اور باکسنگ کرتے دیکھا گیا۔ اس کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے۔ کیمرا مین کا نام بجوئے شنکر بنیا بتایا جا رہا ہے جو ضلع درانگ کے انفارمیشن اینڈ پبلک ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ کا ملازم ہے۔ 
ہندوستان میں مسلمان شہری کی لاش پر چھلانگ لگانے کی ویڈیو
ہندوستان کی ریاست آسام کے ضلع درنگ میں جمعرات کے روز غیر قانونی تجاوزات کے خلاف آپریشن کے دوران پولیس اور مقامی لوگوں کے درمیان شدید جھڑپ ہوئی۔ دھول پور میں ہوئی اس جھڑپ میں دو شہریوں کی موت ہوئی ہے جب کہ پولیس اہلکاروں سمیت 16 افراد زخمی بتائے جا رہے ہیں۔ جھڑپ کے دوران پولیس اہلکاروں کو راست فائرنگ کرتے ہوئے دیکھا گیا۔

جائے وقوع وائرل ہونے والے ویڈیو میں ایک شخص کو ڈنڈے کے ساتھ پولیس اہلکاروں کی طرف بڑھتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے، جسے پولیس اہلکار بے رحمی سے پیٹ رہے ہیں۔ اس تشدد میں دو افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ پولیس اہلکاروں سمیت کم از کم 16 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ہلاک ہونے والوں کی شناخت صدام حسین اور شیخ فرید کے نام سے ہوئی ہے۔ 

ویڈیو میں مہم کو کور کر رہا کیمرہ مین اسے پولیس فائرنگ میں مارے گئے ایک شخص کی لاش پر چھلانگ لگاتے ، لات مارتے اور باکسنگ کرتے دیکھا گیا۔ اس کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے۔ کیمرا مین کا نام بجوئے شنکر بنیا بتایا جا رہا ہے جو ضلع درانگ کے انفارمیشن اینڈ پبلک ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ کا ملازم ہے۔ 

اس واقعے کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد، انتظامیہ نے اب گوہاٹی ہائی کورٹ کے ایک ریٹائرڈ جج سے اس معاملے کی تحقیقات کروانے کا وعدہ کیا ہے۔

ضلع درنگ میں آل آسام اسٹوڈنٹس یونین All Assam) ("Students' Union کے عین الدین احمد نے بتایا کہ بستی کو توڑنے کی پولیس کی مہم کے خلاف پانچ ہزار لوگ جمع ہوئے تھے۔

اس دوران جھڑپیں ہوئیں اور پولیس نے فائرنگ کی جس میں دو افراد ہلاک اور 20 سے زائد زخمی ہوئے۔ اس بستی میں رہنے والے تمام لوگ مسلمان ہیں۔

آسام میں بی جے پی کی حکومت ہے اور وہ ریاست بھر میں کئی جگہوں پر ایسی کچی بستیوں کو خالی کرنے کے لیے طاقت کا استعمال کر رہی ہے۔ حکومت ان بستیوں کے لوگوں کو گھسپیٹ کہتی ہے۔

اپوزیشن کانگریس پارٹی کے رہنما عبدالباطین کا کہنا ہے کہ این آر سی کے بعد اب یہ نیا سلسلہ شروع کیا گیا ہے، آسام کو فرقہ وارانہ سیاست کی تجربہ گاہ بنا دیا گیا ہے ، حکومت مسلمانوں کو اس قدر بے بس اور بے بس بنانے کی کوشش کر رہی ہے کہ وہ اپنی آواز بلند نہ کر سکے۔

لاش پر کھودنے کا ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد اسکی شدید تنقید و مذمت کی جارہی ہے۔ تبصرہ نگار انکور بھاردواج نے کہا کہ ایک فوٹو جرنلسٹ ایک مردہ شخص کی لاش پر کود رہا ہے جسے ابھی سیکورٹی فورسز نے قتل کیا ہے بالکل اسی بات کے برابر ہے جیسا کہ ہم پچھلے کئی سالوں سے نیوز اینکرز کو سٹوڈیو میں کرتے دیکھ رہے ہیں۔ یہ موت کا ناچ ہے۔

شیو سینا کی رہنما پرینکا چترویدی نے کہا کہ ہم خون کا پیاسہ سماج بن چکے ہیں ، اس کیمرہ مین اور پولیس اہلکار نے اس شہری کے ساتھ جو رویہ اختیار کیا وہ کوئی اور نہیں ہم ہی میں سے ہے۔

کانگریس لیڈر راہل گاندھی نے ٹویٹ کیا کہ حکومت کی نگرانی میں آسام میں آگ لگی ہوئی ہے ، میں اپنے بھائیوں اور بہنوں کے ساتھ کھڑا ہوں۔
http://www.taghribnews.com/vdccoxqpe2bqis8.c7a2.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس