تقريب خبررسان ايجنسی 26 Nov 2022 گھنٹہ 14:45 https://www.taghribnews.com/ur/news/574620/تمام-بسجین-آج-اس-بیان-کے-سامعین-ہے-میں-آپ-ہر-ہاتھ-کو-چومتا-ہوں -------------------------------------------------- ٹائٹل : تمام بسجین آج اس بیان کے سامعین ہے۔ میں آپ کے ہر ہاتھ کو چومتا ہوں -------------------------------------------------- رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا کہ بانی انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی رحمۃ اللہ علیہ کے اہم کارناموں میں سے ایک عوامی رضاکار فورس بسیج کی تشکیل ہے۔ متن : رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای  نے فرمایا کہ بعض لوگ سیاسی فہم و فراست کا دعویٰ کرتے ہیں لیکن ان کے تجزیے لوگوں کو غمگین کرتے ہیں اور فرمایا کہ خلفشار کو ختم کرنے کے لیے ضروری ہے کہ امریکہ کے ساتھ مسائل حل کریں۔ انہوں نے کہا:انہوں نے کہاکہ امریکہ کے ساتھ مذاکرات سے ہمارا مسئلہ حل نہیں ہوگا، بلکہ یہ مسئلہ مسلسل رشوت دینے سے حل ہوگا۔ تقریب خبر رساں ایجنسی کے  مطابق، ہفتہ بسیج کی مناسبت سے رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای کے ساتھ ملک کے باسیجوں کی ایک اجتماعی ملاقات آج ہفتہ کی صبح 9:45 بجے امام خمینی (رہ) میں حسینیہ میں شروع ہوئی۔ اسے ٹیلی ویژن اور انٹرنیٹ پر براہ راست نشر کیا گیا۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا کہ بانی انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی رحمۃ اللہ علیہ کے اہم کارناموں میں سے ایک عوامی رضاکار فورس بسیج کی تشکیل ہے۔ آپ نے فرمایا کہ حضرت امام خمینی رحمۃ اللہ علیہ نے تہران میں امریکہ کے جاسوسی کے اڈے پر قبضہ کرنے کے 20 دن بعد بسیج کی تشکیل کا اعلان کیا اوراس وقت سے لے کر اب تک بسیجیوں نے عسکری اور دوسرے میدانوں میں بڑی بڑی کامیابیاں حاصل کیں۔ امام کے بیان کے کچھ حصوں کو پڑھتے ہوئے انہوں نے اشارہ کیا: اس بیان اور تقریر میں ہمارے پیارے امام نے درحقیقت بسیج سے ایک باپ کی طرح بات کی جو اپنے بچوں سے محبت کرتا ہے۔ پھر امام نے اس عظمت کے ساتھ فرمایا جس نے دنیا اور تاریخ کو ہلا کر رکھ دیا: "مجھے بسیج ہونے پر فخر ہے... میں آپ کے ہر ہاتھ کو چومتا ہوں۔" یہ واقعی ناقابل فراموش ہیں۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے بسیجیوں کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا: تم بسجین آج اس بیان کے سامعین ہو۔ میں آپ کے ہر ہاتھ کو چومتا ہوں۔ بسیج کا تمام شعبوں میں موجود ہونا ضروری ہے۔ انہوں نے اشارہ کیا: آذر 67 کے اسی بیان میں امام طلباء کو جمع کرنے کا اعلان کرتے ہیں، یہ ایک خاص معنی رکھتا ہے۔ وہ دینی علوم کے طلباء سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ متحرک ہوجائیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ بسیج کا تعلق عسکری شعبے سے نہیں ہے، بسیج کو تمام شعبوں میں موجود ہونا چاہیے، بشمول مذہبی سائنس اور مادی سائنس کے شعبے میں۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا: امام عالی مقام نے ایسا کرکے درحقیقت ایک خطرے کو موقع میں بدل دیا۔ وہ دھمکی یہ تھی کہ امام نے یہ اعلان 5 اور 6 دسمبر 1958 کو کیا اور بسیج کی تشکیل کا حکم دیا، اور یہ 13 نومبر کو جاسوسی کے گھونسلے پر قبضے کے تقریباً 20 دن بعد تھا۔ جاسوسی کے مزکز پر 13 نومبر کو قبضہ کیا گیا تھا اور امام کا بیان 5 اور 6 نومبر کو جاری کیا گیا تھا۔ 13 نومبر کو اس واقعے کے بعد اور امام کی پیروی کرنے والے طلباء نے جاسوسی کے اڈے پر قبضہ کر لیا اور وہاں سے دستاویزات نکال لیے، امریکی غصے میں آگئے اور انہوں نے زبانی اور عملی طور پر دھمکیاں دینا شروع کر دیں۔ ان کا عملی خطرہ یہ تھا کہ وہ رفتہ رفتہ اپنے بحری جہاز خلیج فارس لے آئے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے کہا: عام طور پر ممالک کے سربراہان جب امریکہ کی طرف منہ موڑتا ہے تو بے حس اور خوف زدہ ہو جاتے ہیں، امام نے غیر فعال یا خوف زدہ ہونے کے بجائے عوامی تحریک کی صورت میں قوم کو میدان میں لایا۔ یعنی اس خطرے کو ایک موقع میں بدل دیا اور میدان جنگ کو صرف سرکاری تنظیموں تک محدود نہ رہنے دیا اور قوم کے ارکان کو داخل ہونے کا سبب بنا۔ یہ امام کی مہارت اور خدا کی عطا کردہ نعمتوں میں سے ایک تھی جس نے خطرات کو مواقع میں بدل دیا۔  بسیج عسکری شعبے میں چمکا اور جنگ میں اس کی موجودگی فیصلہ کن تھی۔ اس نے فوج اور سپاہ پاسداران کی پشت پناہی کی تاہم میدان جنگ میں بسیج کا امتحان ایک شاندار آزمائش تھا۔ بسیج صرف ایک عسکری تنظیم نہیں ہے بلکہ اس کا مقام بلند و بالا ہے۔ بسیج ﴿موبلائزیشن﴾ ایک کلچر اور ڈسکورس ہے، ایک فکر ہے۔ یہ ثقافت معاشرے اور ملک کی بے لوث خدمت سے عبارت ہے۔ انہوں نے کہا: اس لیے میدان جنگ میں متحرک ہونے کا امتحان ایک شاندار امتحان تھا۔ لیکن بسیج صرف ایک فوجی تنظیم نہیں ہے اور یہ ان الفاظ سے بالاتر ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ بسیج کی حیثیت ایک عسکری تنظیم سے زیادہ ہے۔ یہ ایک بنیادی نکتہ ہے۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے فرمایا: متحرک ہونا ایک ثقافت اور گفتگو ہے، متحرک ہونا ایک فکر ہے۔ یہ ثقافت کمیونٹی اور ملک کی بے مثال اور غیر متوقع خدمت پر مشتمل ہے۔ بغیر انتظار کیے اور بیٹھے اور انتظار کیے بغیر ان کا بارک اللہ کہنا۔ یہاں تک کہ بہت سے معاملات میں، بسیج فنڈز اور سہولتوں کے بغیر کسی میدان میں داخل ہونے کے لیے مختلف میدانوں میں داخل ہوتا ہے، اور جہادی خدمات انجام دیتا ہے اور جہادی خدمات کا خطرہ مول لیتا ہے۔ اور یہ بسیجی کلچر ہے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے کہا: بسی جی کی ثقافت کا مطلب ہے گھٹنوں کے بل مٹی میں جا کر سیلاب زدہ خاندانوں کے کمروں سے کیچڑ صاف کرنا۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ خود کو کورونا وائرس سے متاثر ہونے اور موت کے خطرے میں ڈالنا تاکہ کورونا لوگوں کو موت کے خطرے سے بچایا جا سکے۔ بسی جی کی ثقافت کا مطلب ہے کہ مذہبی مدد سے کبھی نہ تھکنا، جو اس نمائش میں دکھائی گئی جس کا ہم دورہ کر رہے تھے۔ میں اس بات سے پوری طرح واقف ہوں کہ بسیجیوں نے مومنین کی مدد کا اعلان کرنے اور جہادی کیمپوں کی طرف بڑھنے میں کیا کیا۔ جس قدر وہ کر سکتے تھے، بسیجوں نے جدید اور دلچسپ طریقوں سے پورے ملک میں مذہبی مدد تیار کی۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا: تجربہ گاہوں میں سائنس اور تحقیق کے ماحول میں ایسے نوجوانوں کا موثر متحرک ہونا تھا جو سائنس اور تحقیق کے لوگ تھے اور کورونا اور دیگر معاملات میں متحرک ہونے کا جذبہ رکھتے تھے۔ ہمارے ایٹمی شہداء کی مثال جو بسیج تھے۔ اس کی مثال کاظمی مرحوم کی ہے جنہوں نے اس وسیع نظام کو ترتیب دیا اور سائنسی اور تحقیقی کام کیا اور یہی بسیجی ثقافت ہے۔ دشمن کا مقابلہ کرنے کے میدان میں، جنگی میدان میں، بغیر کسی روک ٹوک کے میدان میں اترنا، دشمن سے خوفزدہ نہ ہونا، دشمن کو موقع نہ دینا، بسیجی ثقافت کا حصہ ہے۔ ہر سیاسی، عسکری اور سائنسی مہم میں داخل ہونا اور اپنی پوری طاقت استعمال کرنا بسی جی کا کلچر ہے۔ انہوں نے مزید کہا: "بسیج" مجاہدین کی نامعلوم ثقافت ہے، جیسا کہ امام کے بیان میں ذکر کیا گیا ہے۔ خطرہ مول لینا، خوفزدہ نہ ہونا اور تمام ممالک کی خدمت کرنا۔ اپنے آپ کو دوسروں کے حوالے کرنا ہے، یہاں تک کہ مظلوم کو آزاد کرنے کے لیے مظلوم بننا ہے۔ اس معاملے میں آپ نے حال ہی میں دیکھا کہ مظلوم بسیجی خود مظلوم بن گئے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے فرمایا: ان حالیہ واقعات میں آپ نے دیکھا کہ مظلوم بسیجین خود مظلوم ہیں تاکہ مظلوموں کو فسادیوں، غافل، جاہلوں یا مظلوموں کا ٹولہ نہ بننے دیں۔ دوسروں کے ظلم کو روکنے کے لیے وہ خود مظلوم ہوتے ہیں، اپنے آپ کو مایوس نہیں ہونے دیتے اور یہ بسیجی ثقافت کا ایک اہم حصہ ہے۔ بسیج کے لیے مایوسی کوئی معنی نہیں رکھتی۔ بسیجی کی مختصر تفصیل یہ ہیں۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا: ایک اور اہم نکتہ یہ ہے کہ آج بھی ملک میں بسیج کو تربیت دینے اور بسیج میں نئی ​​پیشرفت پیدا کرنے کی صلاحیت موجود ہے اور بسیج میں یہ صلاحیت بھی ہے کہ ملک کو قدم بہ قدم آگے بڑھائیں۔ اس کا مطلب ہے کہ دونوں ملک اس بسیجی کے ساتھ ساتھ بسیجی تنظیم اور عام بسیجی عوام کے لیے دوبارہ تخلیق کرنے کے لیے تیار ہیں۔  اسلامی دنیا میں بھی لاکھوں بسیجی ہیں۔ ہر دور میں بسیج کی موجودگی ظاہر کرتی ہے کہ انقلاب زندہ ہے، ان کی آنکھوں کا کانٹا بن کر کہ جنہیں انقلاب کے لفظ سے وحشت ہوتی ہے، پریشانی ہوتی ہے، وہ پسند نہیں کرتے کہ انقلاب کا نام لیا جائے، وہ انقلاب کے لیے اپنی بیزاری کا اظہار کرتے ہیں لیکن بسیج کا وجود ظاہر کرتا ہے کہ انقلاب زندہ ہے، انقلاب جدت ساز اور تخلیق کا مالک ہے۔ موبلائزیشن صرف فوجی موبلائزیشن نہیں ہے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے اس بات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہ امام نے آذر 67 کے بیان میں طلبہ کو متحرک کرنے کا اعلان کیا تھا، دینی علوم کے طلبہ اور طالبات سے مطالبہ کیا کہ وہ متحرک ہوجائیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ بسیج صرف ایک فوجی تحریک نہیں ہے، اور بسیج کو تمام شعبوں میں موجود ہونا چاہیے۔ آپ کو بسیجی کے جذبے کو برقرار رکھنا چاہیے۔ انہوں نے عملیت پسندی کو بسیج کی خصوصیات میں سے ایک کے طور پر درج کیا اور مزید کہا: عملیت پسندی کے علاوہ، بسیج مثالی ہے، لہذا آپ کو بسیج کی روح کو برقرار رکھنا چاہیے اور اس کے نام پر فخر کرنا چاہیے۔ بسیج افواج کے کمانڈر انچیف نے بسیج کو زیادہ سے زیادہ قرآن اور مستحب کی تلاوت کرنے اور شہداء کی سیرت پڑھنے کی نصیحت کی اور مزید کہا: میں تاکید کرتا ہوں کہ بسیج بسیج کی قدر کریں اور ان کے مقام کو تسلیم کریں۔ انہوں نے اس بات کو یاد کرتے ہوئے کہ بسیج کو عالم اسلام کے سیاسی جغرافیہ میں ایک ممتاز مقام حاصل ہے، مزید کہا: مغربی استعماری محاذ کا مغربی ایشیا کے بارے میں ایک خاص نقطہ نظر ہے کیونکہ یہ خطہ اہم ہے، مغرب کے صنعتی پہیے کی حرکت کا سب سے اہم عنصر۔ وہ تیل ہے جو اس خطے میں موجود ہے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے مغربی ایشیا اور خاص طور پر ایران کی جغرافیائی اور جغرافیائی خصوصیات کے بارے میں بات کی اور اس بات کو یاد کرتے ہوئے کہ اسلامی انقلاب نے ایران کے ہمسایہ ممالک کے دلوں کو بدل دیا، فرمایا: امریکیوں کا خیال تھا کہ ایران پر حملہ کرنے سے پہلے وہ پڑوسی ممالک جو ایران پر حملہ کر رہے ہیں۔ اسلامی جمہوریہ کی سٹریٹجک گہرائی کو مفلوج کرنے کے لیے خود امریکیوں نے 2006 میں اس منصوبے کا انکشاف کیا اور کہا کہ عراق، شام، لبنان، لیبیا، سوڈان اور صومالیہ کے چھ ممالک کو پہلے تہس نہس کیا جائے، پھر ایران پر آ جائے۔ انہوں نے مزید کہا: اسلامی جمہوریہ کبھی بھی شمالی افریقہ میں داخل نہیں ہوا لیکن ان تینوں ممالک عراق، شام اور لبنان میں ایران کی پالیسی نے کام کیا جس کے نتیجے میں ان ممالک میں امریکہ کو شکست ہوئی۔ انہوں نے شہید قاسم سلیمانی کی بہادری کا حوالہ دیتے ہوئےحاج قاسم کا نام ایران کے دشمنوں کے لیے ناگوار ہے کیونکہ اسلامی جمہوریہ کی پالیسی کا پرچم جس نے دشمن کے گہرے منصوبے کو ناکام بنایا، اس شہید کے ہاتھ میں تھا۔ امریکہ کے ساتھ ہمارا مسئلہ صرف مستقل تاوان ہی حل کرے گا۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے مزید فرمایا: بسیج کو یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ اصل تنازعہ عالمی استکبار سے ہے، یہ چار افراد یا تو غافل، جاہل یا کرائے کے لوگ ہیں۔ انہوں نے مزید کہا: کچھ لوگ سیاسی سمجھ بوجھ کا دعویٰ کرتے ہیں لیکن اخبارات اور سائبر اسپیس میں ان کے تجزیے واقعی لوگوں کو غمگین کرتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ان پریشانیوں کو ختم کرنے کے لیے آپ کو ایک مسئلہ درکار ہے۔ امریکہ کے ساتھ حل؟! رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے تاکید کی: امریکہ کے ساتھ مذاکرات سے ہمارا مسئلہ حل نہیں ہوگا۔ ایک چیز جو امریکہ کے ساتھ ہمارا مسئلہ حل کرے گی وہ ہے امریکہ کے ساتھ تاوان ادا کرنا، لیکن صرف ایک تاوان نہیں، وہ ہمیشہ تاوان مانگتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا: کون سا ایرانی جوش و خروش سے اس قدر فدیہ دینے کو تیار ہے؟ جو کوئی بھی ایرانی ہے اور جوش و جذبہ رکھتا ہے وہ یہ تاوان ادا کرنے کو تیار نہیں، وہ کیوں نہیں سمجھتے کہ امریکہ چاہتا ہے کہ ایرانی قوم تمام سرخ لکیریں عبور کرے۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے مزید فرمایا: اس سال 13 نومبر کو قوم کی گرج دار آواز بلند ہوئی، آپ نے سنی! آج شہداء کا جنازہ ایرانی قوم کی آواز ہے، کرج، اصفہان اور شیراز میں شہداء کے جنازوں میں ایران کے بہت سے لوگوں نے مارچ کیا اور شرکت کی۔ انہوں نے بسیجیوں کو کچھ نصیحتیں دیتے ہوئے زور دیا: بسیج میں رہو اور اپنی تعریف کرو۔ اپنے دشمن کو جانیں اور دشمن کے کمزور نکات اور منصوبوں کو جانیں کیونکہ دشمن خود کو مضبوط دکھانے کی کوشش کرتا ہے۔ رہبر معظم انقلاب نے مزید فرمایا: اپنی روحانی نشوونما کی پیمائش کریں، محتاط رہیں کہ آپ آگے بڑھ رہے ہیں یا پیچھے، آگے بڑھنے کی کوشش کریں۔ رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے فرمایا کہ آج دشمن کا سب سے اہم طریقہ جھوٹ بولنا اور جھوٹ پھیلانا ہے: وہ جھوٹی خبریں اور تجزیے دیتے ہیں، قتل کرتے ہیں، آج دشمن جھوٹ کی بنیاد پر کام کرتا ہے، جہاد کی وضاحت کرنا تمہارا فرض ہے۔ انہوں نے مزید کہا: دشمن دماغوں پر غلبہ حاصل کرنے کی کوشش کرتا ہے، اگر کسی قوم کے دماغ پر قبضہ کر لیا جائے تو وہ قوم دو ہاتھوں سے اپنی سرزمین دشمن کے حوالے کر دے گی۔ انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا: اپنی عملی تیاری کو برقرار رکھیں، آپ کو تعجب نہیں ہونا چاہیے، دشمن کے اعمال میں سے ایک یہ ہے کہ وہ ایک مقام پر شور سے کام شروع کرتا ہے اور دوسرے مقام پر اہم کام کرتا ہے، ملکی حکام کو اپنے اردگرد کی ہر چیز پر توجہ دینی چاہیے۔ ہمارے لیے مغربی ایشیا اور مشرق کا خطہ اہم ہے۔ رہبر معظم انقلاب نے بسیج کو نصیحت کی: بسیج میں دشمن کے اثر و رسوخ سے ہوشیار رہیں، بدعنوان شخص اپنے آپ کو مولوی یا بسیج کا روپ دھار سکتا ہے۔ قومی فٹ بال ٹیم کی فتح پر قائد انقلاب کا فرمان رہبر معظم انقلاب اسلامی نے مزید فرمایا: کل ہماری قومی ٹیم کے بچوں نے ہماری قوم کی آنکھوں کو روشن کردیا۔ خدا ان کی آنکھوں میں برکت دے۔ انہوں نے لوگوں کو خوش کیا۔