روہنگیا خواتین کے ساتھ ہونے والی زیادتیوں کی تصدیق
زیادتی کا شکار 350 سے زائد افراد کو جان بچانے والی طبی امداد فراہم کی گئی
میانمار کی مسلح افواج کی جانب سے روہنگیا خواتین پر جنسی تشدد کی تصدیق ہوگئی
تاریخ شائع کریں : دوشنبه ۳ مهر ۱۳۹۶ گھنٹہ ۲۳:۲۵
موضوع نمبر: 285550
 
اقوام متحدہ کے ڈاکٹروں نے میانمار میں روہنگیا مسلمان خواتین کے ساتھ زیادتیوں کی تصدیق کردی ہے۔ بنگلا دیش میں مہاجر کیمپوں میں روہنگیا مسلمانوں کا علاج کرنے والے اقوام متحدہ کے ڈاکٹروں اور طبی ماہرین نے بتایا کہ انہوں نے درجنوں روہنگیا خواتین کے جسموں پر خوفناک جنسی تشدد کے نشانات دیکھے جنہیں دیکھ کر حیوان بھی شرما جائیں۔

اقوام متحدہ کے طبی ماہرین کے اس انکشاف کے بعد  میانمار کی مسلح افواج کی جانب سے روہنگیا خواتین پر جنسی تشدد کی تصدیق ہوگئی ہے۔ اقوام متحدہ کی بین الاقوامی تنظیم برائے مہاجرین (آئی او ایم) کے ڈاکٹروں نے بتایا کہ انہوں نے سیکڑوں خواتین کا اعلاج کیا جن کے جسموں پر جنسی حملوں کے خوفناک گھاؤ تھے۔

برمی فوجی مسلمان خواتین کو زیادتی کا نشانہ بنانے کے ساتھ ساتھ ان پر تشدد بھی کرتی ہے یہاں تک کہ بعض عورتوں کے نازک اعضا پر بندوق داخل کرنے کی انسانیت سوز کوشش کی گئی۔ آئی او ایم کے ایک ڈاکٹر نے بتایا کہ ایک خاتون کے ساتھ کم از کم 7 برمی فوجیوں نے زیادتی کی اور وہ انتہائی کمزور اور صدمے کی کیفیت میں تھی۔

بنگلا دیش کے کاکس بازار میں 8 طبی ماہرین نے رائٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ انہوں نے اگست کے آخر میں 25 سے زیادہ روہنگیا خواتین کا علاج کیا جن کے ساتھ میانمار کے فوجیوں نے زیادتی کی تھی۔ اقوام متحدہ کے ڈاکٹرز اور امدادی کارکن عموما کسی ملک کی مسلح افواج کے ہاتھوں جنسی زیادتیوں پر بات نہیں کرتے لیکن روہنگیا خواتین کے ساتھ ہونے والی جنسی درندگی کا مظاہرہ اتنا سنگین ہے کہ وہ بھی بولنے پر مجبور ہوگئے۔

امدادی تنظیموں کی ایک رپورٹ میں کہا گیا کہ زیادتی کا شکار 350 سے زائد افراد کی حالت اتنی خراب تھی کہ انہیں جان بچانے والی طبی امداد فراہم کرنی پڑی۔

میانمار کی فوج کا کہنا ہے کہ وہ ریاست راکھائن میں روہنگیا مسلمانوں کے خلاف انسداد دہشت گردی آپریشن کر رہی ہے۔ میانمار کی حکمراں جماعت کی رہنما آنگ سان سوچی کے ترجمان زو ہٹے نے جنسی زیادتی کے حملوں کی تحقیقات کا وعدہ کرتے ہوئے کہا کہ متاثرہ خواتین ہمارے پاس آئیں ہم انہیں تحفظ دیں گے اور تحقیقات کرنے کے بعد ایکشن لیں گے۔

تاہم امن کی نوبل انعام یافتہ آنگ سان سوچی نے روہنگیا خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے معاملے پر کوئی بات کرنا گوارا نہیں کی۔

اپریل میں اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انٹونیو گوٹیرش نے بھی کہا تھا کہ جنسی حملوں کا مقصد پوری برادری کو رسوا اور دہشت زدہ کرنا ہے۔ واضح رہے کہ میانمار میں اکتوبر سے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف فوجی آپریشن جاری ہے جس کے نتیجے میں ہزاروں مسلمان شہید اور لاکھوں ہجرت پر مجبور ہوگئے ہیں۔
Share/Save/Bookmark