علامہ مفتی جعفر حسین رحمتہ اللہ علیہ کی 34 ویں برسی
مفتی جعفر حسین مرحوم قادیانیوں کیخلاف تحریک کے ہراول دستے میں شامل رہے اور ملت جعفریہ کی طرف سے قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دینے کی قرارداد پر
مفتی جعفر حسین مرحوم قادیانیوں کیخلاف تحریک کے ہراول دستے میں شامل رہے اور ملت جعفریہ کی طرف سے قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دینے کی قرارداد پر دستخط بھی کئے
تاریخ شائع کریں : سه شنبه ۷ شهريور ۱۳۹۶ گھنٹہ ۱۴:۱۰
موضوع نمبر: 281623
 
تحریک نفاذ فقہ جعفریہ پاکستان کے بانی قائد علامہ مفتی جعفر حسین رحمتہ اللہ علیہ کی 34 ویں برسی آج (29۔ اگست) ملک بھر میں منائی جا رہی ہے۔

اس حوالے سے مختلف تنظیمیں قرآن خوانی، سیمینارز اور کانفرنسوں کا اہتمام کریں گی۔ واضح رہے کہ مفتی جعفر حسین 1914ء میں گوجرانوالا میں حکیم چراغ دین کے ہاں پیدا ہوئے۔

انہوں نے ابتدائی اسلامی تعلیم اور قرآن حکیم کی تعلیم حکیم شہاب الدین سے 5 سال کی عمر میں حاصل کی اور 7 سال کی عمر میں حدیث و فقہ کی تعلیم حاصل کرنا شروع کر دی۔

بعدازاں لکھنو اور حوزہ علمیہ نجف اشرف عراق میں مزید تعلیم حاصل کی اور واپس آکر گوجرانوالہ میں تبلیغ دین اور درس و تدریس میں مشغول ہوگئے۔

مفتی جعفر حسین مرحوم قادیانیوں کیخلاف تحریک کے ہراول دستے میں شامل رہے اور ملت جعفریہ کی طرف سے قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دینے کی قرارداد پر دستخط بھی کئے۔

انہوں نے اسلامی نظریاتی کونسل کے رکن کی حیثیت سے بھی گرانقدر خدمات سرانجام دیں۔ اپریل 1979ء کے بھکر کنونشن میں انہیں قائد ملت جعفریہ منتخب کیا گیا اور اپنے مطالبات منوانے کیلئے 1980ء کے سول سیکرٹریٹ اسلام آباد کے گھیراؤ کی قیادت کی۔

انہوں نے انتہائی سادہ زندگی گزاری۔ امیرالمومنین حضرت علی علیہ السلام کے خطبات، خطوط اور اقوال پر مشتمل کتاب نہج البلاغہ اور چوتھے تاجدار امامت حضرت امام زین العابدین علیہ السلام کی دعاوں کے مجموعہ صحیفہ کاملہ کا اردو ترجمہ، اور شہرہ آفاق کتاب سیرت امیرالمومنین ؑکی تالیف ان کی بہترین مذہبی اور ادبی خدمات ہیں۔ اپنی زندگی کے آخری دنوں میں وہ علیل ہوگئے۔ 29 اگست 1983ء کو انتقال کرگئے اور کربلا گامے شاہ لاہور میں دفن کئے گئے۔
Share/Save/Bookmark