تاریخ شائع کریں2022 26 May گھنٹہ 12:18
خبر کا کوڈ : 551068

انسانی امداد کو ہرگز سیاسی رنگ نہیں دینا چاہیے

تخت روانچی نے کہا کہ یمن میں اسکولوں، اسپتالوں، مواصلاتی انفراسٹرکچر، سڑکوں، کارخانوں، گھروں اور دیگر شہری اشیاء پر حملوں کے نتیجے میں شدید غذائی عدم تحفظ پیدا ہوا ہے کیونکہ ضرورت مند افراد میں 8 فیصد اضافے کے ساتھ صورتحال مزید ابتر ہوگئی ہے۔
انسانی امداد کو ہرگز سیاسی رنگ نہیں دینا چاہیے
 اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل مندوب اور نمائندے نے شہریوں کے زیادہ تحفظ اور تنازعات والے علاقوں میں انسانی امداد کی فراہمی میں سہولت فراہم کرنے پر زور دیا اور کہا ہے کہ انسانی امداد کو ہرگز سیاسی رنگ نہیں دینا چاہیے۔

یہ بات مجید تخت روانچی نے بدھ کے روز مسلح تنازعات میں شہریوں کے تحفظ کے موضوع پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے مشرق وسطیٰ کے خطے پر تنازعات کے اثرات کا حوالہ دیا اور کہا کہ تنازعات اور جھڑپوں نے خطے پر تباہ کن اثرات چھوڑے ہیں، مشرق وسطی کا خطہ، ایک ایسا خطہ جہاں بین الاقوامی انسانی قوانین کی صریح خلاف ورزی کی جاتی ہے۔

تخت روانچی نے کہا کہ یمن میں اسکولوں، اسپتالوں، مواصلاتی انفراسٹرکچر، سڑکوں، کارخانوں، گھروں اور دیگر شہری اشیاء پر حملوں کے نتیجے میں شدید غذائی عدم تحفظ پیدا ہوا ہے کیونکہ ضرورت مند افراد میں 8 فیصد اضافے کے ساتھ صورتحال مزید ابتر ہوگئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسی رفتار سے فلسطین میں کئی دہائیوں کے قبضے اور ناجائز صہیونی ریاست کی نسل پرستانہ پالیسیوں کے نتیجے میں انسانی صورت حال مزید ابتر ہوئی ہے، خواتین اور بچوں سمیت عام شہریوں کے خلاف بڑے پیمانے پر اور منظم قتل عام کا سلسلہ تاحال جاری ہے اور فلسطین کی سرزمین دنیا میں صحت اور علاج کے شعبے میں سب سے زیادہ زخمی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ غزہ میں بنیادی ڈھانچے کو نقصان پہنچا ہے اور فلسطینی ان پر مسلط غیر قانونی محاصرے کی وجہ سے بنیادی خدمات سے محروم ہیں، شام میں غاصبانہ قبضے، دہشت گردی اور یکطرفہ پابندیوں نے لاکھوں افراد کو بے گھر کر دیا ہے، بنیادی ڈھانچے کو نقصان پہنچا ہے اور اہم وسائل، تجارت اور کھانے پینے کی اشیاء اور زرعی فصلوں تک محدود رسائی میں خلل ڈالا ہے۔

اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر اور مستقل نمائندے نے کہا کہ مسلح تنازعات میں شہریوں کا تحفظ انسانی حقوق کا ایک بنیادی اصول ہے، تاہم، بین الاقوامی برادری بین الاقوامی انسانی قانون کی پاسداری کے ساتھ ساتھ اس کی سنگین خلاف ورزیوں کے لیے جوابدہی کی کمی کا مشاہدہ کر رہی ہے۔

انہوں نے کورونا وائرس کی وبا کے پھیلنے اور کورونا ویکسین کی غیر منصفانہ تقسیم کے اثرات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ "COVID-19" بیماری کے پھیلنے سے لوگوں کی مشکلات میں اضافہ ہوا ہے اور صحت کی دیکھ بھال کے نظام پر زیادہ دباؤ پڑا ہے۔

تخت روانچی نے کہا کہ سیکرٹری جنرل کی رپورٹ کے مطابق، ویکسین کی تیاری سے دنیا کے بہت سے حصوں کو وبائی مرض پر قابو پانے میں مدد ملی ہے، تاہم، اس کی تقسیم انتہائی غیر منصفانہ ہے اور تقریباً 3 ارب لوگ اب بھی ویکسین کی پہلی خوراک کے منتظر ہیں کیونکہ ان میں سے بہت سے تنازعات والے علاقوں میں رہتے ہیں جن کی صحت خراب ہے۔

اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل نمائندے نے اپنی تقریر میں شہریوں کو مزید تحفظ فراہم کرنے اور تنازعات والے علاقوں میں انسانی امداد کی سہولت فراہم کرنے کے لیے کئی نکات تجویز کیے، حسب ذیل:

1- انسانی امداد کو کسی بھی صورت میں سیاست نہیں کرنا چاہیے۔

2- مسلح تصادم کے دوران خاص طور پر سب سے زیادہ کمزور افراد جیسے خواتین اور بچوں کو تحفظ اور تحفظ فراہم کرنا بہت ضروری ہے۔ اس تناظر میں یکطرفہ پابندیاں جو مختلف طریقوں سے انسانی امداد کی ترسیل کو روکتی ہیں فوری طور پر ختم کی جائیں۔

3- تمام طبی اور انسانی ہمدردی کے عملے کی جانوں کو محفوظ کیا جانا چاہیے۔
4- ہمیں بین الاقوامی انسانی قوانین، خاص طور پر 1949 کے جنیوا کنونشن اور اضافی پروٹوکول کی تعمیل کا یقین دلایا جانا چاہیے، جو شہریوں کے تحفظ کے لیے قانونی فریم ورک کا سنگ بنیاد ہیں۔

5- شہریوں کے تحفظ کے لیے فوجی مداخلتوں بشمول محاصرہ اور غیر ملکی قبضے کو ختم کرنا ہوگا۔ اس کے علاوہ، ایک طویل المدتی سیاسی حل تک پہنچنا ہی شہریوں کو مصائب اور نقصان سے بچانے کا واحد راستہ ہے، حکومتوں کو چاہیے کہ وہ تنازعات کو روکنے کے لیے بین الاقوامی قوانین کی بنیاد پر اپنی ذمہ داریاں پوری کریں اور انھیں پرامن طریقے سے حل کرنے کے لیے کام کریں۔

6- اقوام متحدہ، خاص طور پر سلامتی کونسل کے لیے یہ بہت اہم ہے کہ وہ تنازعات کے فریقوں سے کہے کہ وہ اپنی ذمہ داریوں کا احترام کریں اور بین الاقوامی انسانی قوانین کی پابندی کریں تاکہ شہریوں کو مزید مشکلات سے بچایا جا سکے۔
http://www.taghribnews.com/vdcepz8nvjh8n7i.dqbj.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس