تاریخ شائع کریں2021 17 October گھنٹہ 23:26
خبر کا کوڈ : 523044

شیعہ مساجد پر حملوں کے پیچھے عالمی اور علاقائی انٹیلی جینس ایجنسوں کا ہاتھ

شیعہ علما کونسل افغانستان نے ، قندھار کی شیعہ جامع مسجد میں نمازیوں کے قتل عام کی مذمت کرتے ہوئے، عبوری طالبان حکومت کے سیکورٹی عہدیداروں پر زور دیا ہے کہ وہ ملکی سلامتی اور خاص طور سے شیعہ مسلمانوں کے مذہبی اور ثقافتی مراکز کے تحفظ کو یقینی بنائیں۔
شیعہ مساجد پر حملوں کے پیچھے عالمی اور علاقائی انٹیلی جینس ایجنسوں کا ہاتھ
افغانستان کی شیعہ علما کونسل نے طالبان سے افغان عوام کے جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔

شیعہ علما کونسل افغانستان نے ، قندھار کی شیعہ جامع مسجد میں نمازیوں کے قتل عام کی مذمت کرتے ہوئے، عبوری طالبان حکومت کے سیکورٹی عہدیداروں پر زور دیا ہے کہ وہ ملکی سلامتی اور خاص طور سے شیعہ مسلمانوں کے مذہبی اور ثقافتی مراکز کے تحفظ کو یقینی بنائیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اگرچہ ہمیں یقین نے شیعہ مساجد پر حملوں کے پیچھے عالمی اور علاقائی انٹیلی جینس ایجنسوں کا ہاتھ کارفرما ہے اور اس کا مقصد ملک میں فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانا اور امن و امان کی صورتحال کو مخدوش ظاہر کرنا ہے لیکن معاملات بھی افغانستان کے حکمرانوں کی حیثیت سے ہموطنوں کے تحفظ کے حوالے سے طالبان کی ذمہ داریوں میں کوئی کمی نہیں کرسکتے۔

شیعہ علما کونسل افغانستان کے بیان میں کہا گیا ہے کہ شیعہ نمازیوں کے قتل عام کے بعد، اہلسنت بھائیوں کی بڑی تعداد نے دل کھول کر خون کے عطیات دیئے اور بعض اہلسنت بھائیوں کو شہدا کے جنازوں پر شیعوں سے زیادہ دلسوز طریقے روتے دیکھا گیا، بنا برایں کوئی بھی ظالم دشمن اور انیٹلی جینس سازش ہمیں ایک دوسرے سے جدا نہیں کرسکتی، ہم ایک ہی باغ کے پھول ہیں، اگرچہ روز عزادار ہیں۔

شیعہ علما کونسل افغانستان کے بیان کے آخر میں افغان عوام سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ، مذہبی مقامات پر اجتماعات کی سیکورٹی کا خود خیال رکھیں۔
http://www.taghribnews.com/vdchkxnmk23nivd.4lt2.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس