تاریخ شائع کریں۱ آبان ۱۳۹۹ گھنٹہ ۲۳:۱۰
خبر کا کوڈ : 479601

پاکستان اور ایران کے درمیان معاشی تعاون کے فروغ پر زور: گورنر بلوچستان

پاکستان کی موجودہ حکومت پڑوسی ممالک کے ساتھ اقتصادی تعلقات کو مضبوط کرنے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے۔ گورنر امان اللہ
پاکستان اور ایران کے درمیان معاشی تعاون کے فروغ پر زور: گورنر بلوچستان
پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے گورنر امان اللہ خان یاسین زئی نے پاکستان اور ایران کے درمیان معاشی تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان ایران جوائنٹ بارڈر ٹریڈ کمیٹی کے آٹھویں اختتامی اجلاس کی سربراہی کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک کے لوگوں میں خوشگوار اور قریبی تعلقات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کمیٹی کی جانب سے کیے گئے فیصلوں پر عمل درآمد دونوں ممالک کے مابین تجارتی تعلقات کو فروغ دینے کے لیے کیا جائے گا۔ گورنر بلوچستان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت پڑوسی ممالک کے ساتھ اقتصادی تعلقات کو مضبوط کرنے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومتوں کے ساتھ ساتھ پاکستان اور ایران کے عوام بھی قریبی تجارتی تعلقات سے مستفید ہورہے ہیں۔اس موقع پر ایرانی وفد کی قیادت کرنے والی سیستان بلوچستان کی اقتصادی رابطہ امور کی ڈپٹی گورنر مندانا زنگانے کا کہنا تھا کہ اس اجلاس میں دوطرفہ تجارت میں دونوں ممالک کے تاجروں کو پیش آنے والی مشکلات پر تبادلہ خیال کیا گیا جبکہ پاکستان اور ایران کی جانب سے شامل شرکا نے ان مسائل کو حل کرنے کے لیے تجاویز بھی پیش کیں۔

مندانا زنگانے کا کہنا تھا کہ 'یہ اجلاس دونوں طرف سے مطلوبہ تجارتی اہداف حاصل کرنے کے لیے نتیجہ خیز ثابت ہوگا'۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ انہوں نے کوئٹہ کے دورے کے دوران بہت اچھا محسوس کیا اور پاکستانی حکام اور کاروباری رہنماؤں کی مہمان نوازی سے لطف اندوز ہوئیں۔

علاوہ ازیں کمیٹی نے دونوں ممالک کے مابین دوطرفہ تجارت اور اقتصادی تعاون بڑھانے سے متعلق مختلف امور پر بھی تبادلہ خیال کیا، مزید یہ کہ دونوں فریقین حکومتی سطح پر بات چیت جاری رکھنے پر بھی متفق ہوئے۔

دوسری جانب اجلاس میں غیر قانونی تاریکین وطن کے ایران میں داخل ہونے اور منشیات کی اسمگلنگ کو روکنے کے حوالے سے اقدامات کا فیصلہ کیا گیا۔ کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ پاکستان اور ایران کے درمیان تجارت پر اثر انداز ہونے والی مشکلات اور رکاوٹوں کو دور کیا جائے گا اور اس سلسلے میں کمیٹیز تشکیل دی جائیں گی جو تجارت اور معاشی تعلقات کو فروغ دے گی۔

پاکستان کی جانب سے اجلاس میں موجود بلوچستان کسٹمز کلیکٹر عبدالوحید مروت کا کہنا تھا کہ اجلاس کے نتیجہ خیز نتائج کے طور پر دوطرفہ تجارت اور معاشی تعاون میں اضافہ ہوگا۔ عبدالوحید کا کہنا تھا کہ دونوں جانب سے نشاندہی کی گئی مشکلات کو باہمی افہام وتفہیم کے ذریعے حل کیا جائے گا۔

ادھر کوئٹہ کے ایوان صنعت و تجارت کے صدر عبد الصمد موسٰی خیل اور زاہدان ایوان صنعت و تجارت کے صدر عبدالرحیم ریگی نے بھی اجلاس سے خطاب کیا اور دوطرفہ اور سرحدی تجارت کو بڑھانے کے لیے مختلف اقدامات کی تجاویز دیں۔

مزید یہ کہ زاہدان میں پاکستانی قونصل جنرل محمد رفیع اور کوئٹہ میں ایرانی قونصل جنرل حسن درویش سمیت دیگر متعلقہ حکام نے بھی اس 2روزہ اجلاس میں شرکت کی۔
http://www.taghribnews.com/vdcgzy9tqak9u34.,0ra.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس