تاریخ شائع کریں۹ اسفند ۱۳۹۸ گھنٹہ ۱۵:۴۲
خبر کا کوڈ : 453034

یورپی یونین نے بھی سینری ڈیل کو نسل پرستانہ قرار دے دیا

سینچری ڈیل کے خلاف جہاں فلسطین اور دوسرے ممالک میں احتجاج ہو رہا ہے وہیں یورپی یونین نے بھی اس پر تحفظات کا اظہار کیا ہے۔
سینچری ڈیل کے خلاف جہاں فلسطین اور دوسرے ممالک میں احتجاج ہو رہا ہے وہیں یورپی یونین نے بھی اس پر تحفظات کا اظہار کیا ہے۔
یورپی یونین نے بھی سینری ڈیل کو نسل پرستانہ قرار دے دیا
سینچری ڈیل کے خلاف جہاں فلسطین اور دوسرے ممالک میں احتجاج ہو رہا ہے وہیں یورپی یونین نے بھی اس پر تحفظات کا اظہار کیا ہے۔
برطانوی روزنامے گارڈین میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق یورپی یونین کے پچاس سابق عہدیداروں نے اپنے ایک مراسلے میں ناپاک امریکی و صیہونی منصوبے ڈیل آف سینچری کو نسل پرستانہ قراردیا ہے۔
سابق فرانسیسی وزیر ڈومینیک ڈو ویلپین، جرمنی کے سابق وائس چانسلر زیگمار گابریل، سابق برطانوی وزیر خارجہ جک اسٹراو، آئرلینڈ کے سابق صدر رابنسن کے علاوہ آسٹریا، بیلجئم، کروشیا، چلی، ڈنمارک، فنلینڈ، اٹلی، ہالینڈ، ناروے، اسپین اور سوئیڈن جیسے ممالک کے سابق وزرا اور عہدیداروں نے بھی اس مراسلے پر دستخط کئے ہیں۔
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اٹھائیس دسمبر کو صیہونی وزیر اعظم بنیامن نیتن یاہو کے ساتھ مل کر وائٹ ہاؤس میں ناپاک منصوبے ڈیل آف سینچری کی رونمائی کی تھی۔اس امریکی و صیہونی منصوبے کابنیادی مقصد ارضِ فلسطین کی تمام تر اقدار اور مفادات کا خاتمہ ہے۔
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس