تاریخ شائع کریں۲۵ ارديبهشت ۱۳۹۸ گھنٹہ ۱۷:۲۶
خبر کا کوڈ : 420311

میانمار کی کسی طرح کی فوجی مدد نا کی جائے، اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کی تحقیقاتی ٹیم کے ایک رکن نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے
اقوام متحدہ کی تحقیقاتی ٹیم کے ایک رکن نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ میانمار کی کسی طرح کی فوجی مدد کرنے سے گریز کرے
میانمار کی کسی طرح کی فوجی مدد نا کی جائے، اقوام متحدہ
اقوام متحدہ کی تحقیقاتی ٹیم کے ایک رکن نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ میانمار کی کسی طرح کی فوجی مدد کرنے سے گریز کرے۔
کرسٹوفر سیدوتی نے اعلان کیا ہے کہ روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام اور گھروں کی مسماری کی بنا پر عالمی برادری کو چاہئے کہ میانماری فوج کی کوئی مدد نہ کرے۔
 انھوں نے کہا کہ میانمار کے صوبے راخین میں فوج  کے اقدامات کے پیش نظر میانماری فوج کے سیاسی و اقتصادی نیز مالی روابط کو نشانہ بنائے جانے کی ضرورت ہے تاکہ دباؤ کے ذریعے علاقے میں تشدد کو روکا جا سکے۔
کرسٹوفر سیدوتی نے کہا کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ میانمار کی حکومت، روہنگیا مسلمانوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے آمادہ ہے۔
واضح رہے کہ میانمار کے صوبے راخین میں اس ملک کی فوج اور انتہا پسند بودھسٹوں کے حملوں میں چھے ہزار سے زائد روہنگیا مسلمان مارے گئے ہیں۔
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس