تاریخ شائع کریں۱۴ مهر ۱۳۹۷ گھنٹہ ۱۴:۲۴
خبر کا کوڈ : 365468

امریکی تحقیر کے باوجود ٹرمپ کے ساتھ کام کرنا پسند ہے

سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا
سعودی عرب کے ٹرمپ نواز ولیعہد محمد بن سلمان نے ٹرمپ کی جانب سے تحقیر اور تذلیل کے جواب میں کہا ہے کہ امریکہ اورسعودی عرب کے تعلقات میں تبدیلی نہیں آئی، سعودی عرب کو ٹرمپ کے ساتھ کام کرنا پسند ہے۔
امریکی تحقیر کے باوجود ٹرمپ کے ساتھ کام کرنا پسند ہے
سعودی عرب کے ٹرمپ نواز ولیعہد محمد بن سلمان نے ٹرمپ کی جانب سے تحقیر اور تذلیل کے جواب میں کہا ہے کہ امریکہ اورسعودی عرب کے تعلقات میں تبدیلی نہیں آئی، سعودی عرب کو ٹرمپ کے ساتھ کام کرنا پسند ہے۔

امریکی کیبل' سیٹلائٹ اور انٹرنیٹ  نیوز ٹیلی ویژن چینل'بلومبرگ''سے گفتگو کرتے ہوئے  سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے  کہا کہ امریکہ اورسعودی عرب کےدرمیان بہترین اقتصادی تعلقات قائم ہیں۔

اس سے قبل امریکی صدر ٹرمپ نے کہا تھا کہ امریکہ کی حمایت کے بغیر سعودی عرب کے بادشاہ  حتی دو ہفتے تک اقتدار میں باقی نہیں رہ سکتے۔ امریکہ کی جانب سے سعودی عرب کی تحقیر کے بعد ایران کے وزیر خارجہ جواد ظریف نے اپنے ٹوئٹ میں کہا کہ تحقیر اغیار کو اپنی سلامتی دینے کا تحفہ ہے۔

سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان نے دعوی کیا کہ ریاض نے تیل کی پیداوار بڑھایا کہ ایران کے تیل کی برآمدات کو زیرو تک پہنچانے سے متعلق امریکی صدر ٹرمپ کی درخواست پر عمل کیا جائے۔

واضح رہے کہ امریکہ 8 مئی 2018کو جوہری معاہدے سے الگ ہوا جس کے بعد امریکی حکومت نے دعوی کیا کہ 4 نومبر 2018 تک ایران کے تیل کی برآمدات کو زیرو تک پہنچا دے گی۔
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس