تاریخ شائع کریں۲۵ مرداد ۱۳۹۶ گھنٹہ ۱۵:۱۸
خبر کا کوڈ : 279779

سعودی عرب اور عراق ملحقہ سرحد کھولنے پر متفق

1990 میں عراق کے ڈکٹیٹر صدام نے کویت پر حملہ کردیا تھا جس کے بعد سعودی عرب نے عراق سے تعلقات منقطع کرلیے تھے
27 برسوں سے اس سرحد کو صرف عازمین حج ہی استعمال کرتے تھے اور یہ صرف حج سیزن میں ہی کھولی جاتی تھی
سعودی عرب اور عراق ملحقہ سرحد کھولنے پر متفق
سعودی عرب نے 27 برس بعد عراق سے ملحقہ سرحد کھولنے کا فیصلہ کیا ہے جو 1990 میں عراق کی جانب سے کویت پر کیے جانے والے حملے کے بعد بند کردی گئی تھی۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق سعودی کابینہ نے گزشتہ روز عراق کے ساتھ مشترکہ ٹریڈ کمیشن کے قیام کا فیصلہ کیا تھا جس کے بعد سعودی عرب اور عراق کو علیحدہ کرنے والی عرعر سرحد کو کھولنے کی تجویز پیش کی گئی۔

اس سلسلے میں سعودی اور عراقی حکام نے عرعر بارڈر کا دورہ کیا اور حج کے لیے جانے والے عراقی عازمین حج سے ملاقات کی۔

واضح رہے کہ 1990 میں عراق کے ڈکٹیٹر صدام نے کویت پر حملہ کردیا تھا جس کے بعد سعودی عرب نے عراق سے تعلقات منقطع کرلیے تھے اور دونوں ملکوں کے درمیان عرعر سرحد کو بند کردیا گیا تھا۔

27 برسوں سے اس سرحد کو صرف عازمین حج ہی استعمال کرتے تھے اور یہ صرف حج سیزن میں ہی کھولی جاتی تھی تاہم اب دونوں ملکوں نے باہمی طور پر اس بات کا فیصلہ کرلیا ہے کہ عرعر کی سرحد کو تجارت سمیت ہر طرح کی آمد و رفت کے لیے کھول دیا جائے گا۔
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس