میانمار میں ریاستی تشدد کے باعث آنگ سان سوچی کی اعزازی شہریت منسوخ

حکمراں جماعت کی رہنما آنگ سان سوچی کی اعزازی شہریت منسوخ
روہنگیا مسلمانوں کے خلاف میانمار کے فوجیوں کے پرتشدد اقدامات کے باعث کہ جسے اقوام متحدہ نے نسل کشی قرار دیا ہے، حکمراں جماعت کی رہنما آنگ سان سوچی کی اعزازی شہریت منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔
تاریخ شائع کریں : يکشنبه ۱۱ آذر ۱۳۹۷ گھنٹہ ۱۸:۱۷
موضوع نمبر: 382439
 
پیرس کی بلدیہ نے میانمار کی حکمراں جماعت کی رہنما آنگ سان سوچی کی اعزازی شہریت منسوخ کر دی۔

  پیرس کی بلدیہ کے جاری کردہ بیان کے مطابق روہنگیا مسلمانوں کے خلاف میانمار کے فوجیوں کے پرتشدد اقدامات کے باعث کہ جسے اقوام متحدہ نے نسل کشی قرار دیا ہے، حکمراں جماعت کی رہنما آنگ سان سوچی کی اعزازی شہریت منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔
  پیرس کی بلدیہ کے عالمی امور کے ڈائریکٹر پیٹریک کلوگ مین نے کہا ہے کہ روہنگیا مسلمانوں کو جس وحشتناک صورتحال کا سامنا ہے اسے دیکھتے ہوئے آنگ سان سوچی کو ہرگز معاف نہیں کیا جا سکتا۔
 جاری کردہ بیان میں سوچی سے اعزازی شہریت واپس لینے کے فیصلے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ اس فیصلے کی توثیق کے لیے دس دسمبر کو اجلاس بھی طلب کر لیا گیا ہے۔
اس سے پہلے ایمنسٹی انٹرنیشنل نے بھی سوچی سے اپنا اعلی ترین سفارتی ایوارڈ واپس لے لیا تھا۔ 
Share/Save/Bookmark