سابق مصری ڈکٹیٹر حسنی مبارک کے بیٹے گرفتار

بیٹوں کو اسٹاک مارکیٹ میں بد عنوانی کے زیر سماعت کیس میں گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔
اعلیٰ مبارک اور جمال مبارک کے علاوہ 7 افراد پر اسٹاک مارکیٹ اور مرکزی بینک کے قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مصر کے ال وطنِ بینک کے شیئرز سے غیر قانونی منافع کمانے کا الزام ہے۔
تاریخ شائع کریں : يکشنبه ۲۵ شهريور ۱۳۹۷ گھنٹہ ۱۲:۵۱
موضوع نمبر: 359532
 
مصر کی عدالت نے ملک کے سابق معزول صدر حسنی مبارک کے 2 بیٹوں کو اسٹاک مارکیٹ میں بد عنوانی کے زیر سماعت کیس میں گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔

عرب نیوز کے مطابق مصر کی سرکاری نیوز ایجنسی مینا کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ اعلیٰ مبارک اور جمال مبارک کے علاوہ 7 افراد پر اسٹاک مارکیٹ اور مرکزی بینک کے قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مصر کے ال وطنِ بینک کے شیئرز سے غیر قانونی منافع کمانے کا الزام ہے۔

خیال رہے کہ اس کیس کا آغاز 2012 میں ہوا تھا اور بیشتر ملزمان نے ضمانت حاصل کرلی تھی لیکن ان کے ملک چھوڑنے پر پابندی عائد کی گئی تھی۔

رپورٹ کے مطابق سابق صدر حسنی مبارک کے بیٹے اعلیٰ ایک بزنس مین ہیں جبکہ ان کے بیٹے جمال سابق بینکر ہیں اور دونوں کی ضمانت 2015 میں منظور ہوئی تھی۔

عدالت میں مذکورہ کیس کی آئندہ سماعت 20 اکتوبر کو ہوگی۔

یاد رہے کہ حسنی مبارک، ان کے وزیر داخلہ اور 6 ساتھیوں کو 2012 میں مقدمے میں عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

لیکن 2014 میں ایک دوسری عدالت نے عمر قید کی سزا کے فیصلے میں تکنیکی خامیاں نکالتے ہوئے اسے کالعدم قرار دے دیا تھا جبکہ مظاہرین کی ہلاکتوں کے حوالے سے فوجداری الزامات کو مسترد کردیا تھا۔

واضح رہے کہ 2011 میں پولیس اور حسنی مبارک کے حامیوں کے ساتھ جھڑپوں اور تصادم میں سیکڑوں مظاہرین ہلاک ہوئے تھے۔
Share/Save/Bookmark