اہلسنت، اہلبیت (ع) کی محبت کو ایمان کا جز مانتے ہیں

ایران کے شہر باخرز میں اہلسنت مدارس کے استاد " علی رضا یعقوبی" نے کہا
امام حسین (ع) کا مقام اہلسنت کی نزدیک ایک خاص اہمیت و منزلت رکھتا ہے روایات کی روشنی میں نماز میں تشھد کے بعد اہلبیت پر درود بھیجنا واجب ہے اور اس امر کے بغیر نماز کامل نہیں ہوتی۔
تاریخ شائع کریں : چهارشنبه ۲۱ شهريور ۱۳۹۷ گھنٹہ ۲۲:۵۷
موضوع نمبر: 358644
 
اہلسنت، اہلبیت (ع) کی محبت کو ایمان کا جز مانتے ہیں

ایران کے شہر باخرز میں اہلسنت مدارس کے استاد " علی رضا یعقوبی" نے تقریب نے خبرنگار سے گفتگو کرتے ہوئے کہا، اہلسنت کی نظر میں عزاداری تین دن تک جائز ہے اور روایات میں تین دن کا ہی ذکر ہوا ہے اس زیادہ عزاداری جاری رکھنا اہلسنت کے ہاں بیان نہیں کیا گیا ہے، یعنی صاحب عزا تین دن تک مسجد یا گھر میں عزاداری منا سکتا ہے اور اس کے بعد اس کا عمل قابل قبول نہیں ہے۔

انہوں اہلسنت اور وہابی مسلک کے درمیان کی عزاداری سے متعلق پائے جانے والے فرق کو بیان کیا، اہلسنت کا عقیدہ ہے کہ صاحب عزا تین دن مسجد یا گھر میں عزاداری کرے اور عزیز و رشتہ دار اس سے تعزیت کریں۔

لیکن وہابی عزاداری کو اساس سے ہی باطل عمل مانتے ہیں اور ان کے نزدیک عزاداری منانا جائز نہیں ہے لیکن اہلسنت کا عقیدہ اس کے بلکل برعکس ہے۔

انہوں نے کہا اہلسنت امام حسین (ع) کو رسول اللہ (ص) کا بیٹا اور بنی مکرم (ص)  کا نواسا مانتے ہیں اور باقی امامان (ع) پر ایمان کو بھی لازم جانتے ہیں ، اہلسنت کے ہاں روایات میں بھی وارد ہوا ہے کہ اہلبیت(ع) کی محبت کے بغیر ایمان کامل ہوتا ہی نہیں ہے۔
امام حسین (ع) کا مقام اہلسنت کی نزدیک ایک خاص اہمیت و منزلت رکھتا ہے روایات کی روشنی میں نماز میں تشھد کے بعد اہلبیت پر درود بھیجنا واجب ہے اور اس امر کے بغیر نماز کامل نہیں ہوتی۔

مولوی یعقوبی نے کہا، اہلسنت کے نزدیک 9 اور 10 محرم کا خاص احترام واضح اور صریح طور پر بیان ہوا ہے اس کے علاوہ تمام محرم کو اہلسنت قابل احترام جانتے ہیں۔

انہوں نے علماء اہلسنت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ علماء اہلسنت کی کتابوں میں واقع عاشورہ بیان کیا گیا ہے اور اس کی مثال علامہ سیوطی اور عصر قریب میں مولانا مودودی ، مولانا ندوی ، مولانا محمد یوسف حسین پور  اور مولانا شہداد نے اپنی کتابوں میں عاشورہ کو بیان کیا ہے۔

اس کے علاوہ اہلسنت شعراء نے بھی امام حسین (ع) کے مصائب میں اشعار کہیے ہیں جو کہ واقع کربلا کو بیان کرتے ہیں۔
Share/Save/Bookmark