امریکی دوغلی پالیسی پر روسی وزیر خارجہ کی تنقید

پابندیوں اور مذاکرات کی امریکی پالیسی کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔
امریکہ پہلے پابندیاں عائد کر کے دباؤ ڈالتا ہے اور پھر مذاکرات کی بات کرتا ہے جبکہ بیشتر مواقع پر واشنگٹن مذاکرات میں زیادہ دلچسپی کا مظاہرہ بھی نہیں کرتا۔
تاریخ شائع کریں : چهارشنبه ۲۱ شهريور ۱۳۹۷ گھنٹہ ۲۲:۰۲
موضوع نمبر: 358635
 
روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے پابندیوں اور مذاکرات کی امریکی پالیسی کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔

 ہمارے نمائندے کے مطابق روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤ روف نے کہا کہ امریکہ پہلے پابندیاں عائد کر کے دباؤ ڈالتا ہے اور پھر مذاکرات کی بات کرتا ہے جبکہ بیشتر مواقع پر واشنگٹن مذاکرات میں زیادہ دلچسپی کا مظاہرہ بھی نہیں کرتا۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ صرف روس کے حوالے سے ہی اس پالیسی پر عمل پیرا نہیں بلکہ اس نے شمالی کوریا، یورپی یونین اور چین کے حوالے سے بھی اس پالیسی پر عمل اور ان ملکوں کے خلاف تجارتی جنگ شروع کر رکھی ہے۔

 روس کے وزیر خارجہ نے کہا کہ یہ بات انتہائی افسوسناک ہے کہ امریکہ کا یہ رویہ اس کی مستقل پالیسی میں تبدیل ہو گیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ روس اور امریکہ کے تعلقات میں سن دو ہزار چودہ سے کشیدگی چلی آرہی ہے اور ٹرمپ کے اقتدار میں آنے کے بعد سے اس میں مزید اضافہ ہو گیا ہے۔
Share/Save/Bookmark