بصرہ کا واقعہ ایران و عراق تعلقات کو متاثر کی سازش ہے

وزیر خارجہ ابراہیم جعفری نے تاکید کے ساتھ کہا ہے
عراق کے وزیر خارجہ ابراہیم جعفری نے ایرانی قوم کے نام اپنے پیغام میں بصرہ کے حالیہ فتنے کا مقصد ایران و عراق کی قوموں کے تعلقات کو متاثر کیا جانا قرار دیا ہے۔
تاریخ شائع کریں : دوشنبه ۱۹ شهريور ۱۳۹۷ گھنٹہ ۱۶:۱۷
موضوع نمبر: 357644
 
عراق کے وزیر خارجہ ابراہیم جعفری نے ایرانی قوم کے نام اپنے پیغام میں بصرہ کے حالیہ فتنے کا مقصد ایران و عراق کی قوموں کے تعلقات کو متاثر کیا جانا قرار دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق عراق کے وزیر خارجہ ابراہیم جعفری نے تاکید کے ساتھ کہا ہے کہ بصرہ کے فتنہ انگیز واقعے کے ذمہ دار عناصر کے خلاف حکومت، قانونی کارروائی کرے گی۔
بصرہ مظاہروں کے منتظمین نے بھی ایک بیان میں کہا ہے کہ احتجاج کے عمل سے فتنہ پرور عناصر نے غلط فائدہ اٹھایا ہے اور ان عناصر کے داعش و کالعدم بعث پارٹی سے روابط ہیں۔
بصرہ میں حالیہ ہفتوں کے دوران بے روزگاری و بجلی و پانی کی قلت اور دیگر مسائل و مشکلات کی بنا پر حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرے ہوتے رہے ہیں تاہم گزشتہ دنوں مشکوک تشدد بھی دیکھنے میں آیا ہے جہاں کچھ فتنہ انگیز عناصر نے لوگوں کے عام احتجاج سے غلط فائدہ اٹھاتے ہوئے بصرہ شہر میں ایران کے قونصل خانے کو جارحیت کا نشانہ بنایا اور اس ایرانی قونصل خانے کو نذر آتش کر دیا۔
Share/Save/Bookmark