شام پر اتحادیوں کا حملہ ناکام رہا

شام پر حملے سے پہلے ضروری اطلاعات روس تک پہنچ چکی تھیں اور اسی وجہ سے شام کے مخصوص علاقوں پر حملے کے وقت کو کئی بار تبدیل بھی کیا گیا
​شیخ نعیم قاسم نے کہا کہ میں عرب ممالک کی سربراہی کانفرنس کو توجہ نہیں دیتا چونکہ میرے خیال میں اس قسم کے کسی بھی اجلاس کا کوئی فائدہ نہیں رہا
تاریخ شائع کریں : سه شنبه ۲۸ فروردين ۱۳۹۷ گھنٹہ ۱۳:۵۵
موضوع نمبر: 325072
 
حزب اللہ لبنان کے نائب سیکرٹری جنرل نے شام پر ہونے والے اتحادیوں کے حملے کو ایک ناکام حملہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ، فرانس اور برطانیہ کے میزائیل حملوں نے شام میں کسی بھی چیز کو تبدیل نہیں کیا۔ 
 
تفصیلات کے مطابق حجت الاسلام و المسلمین شیخ نعیم قاسم نے کہا ہے کہ شام پر حملہ اپنی موجودگی کے اعلان سے زیادہ کچھ نہیں تھا جبکہ ٹرمپ کو علم ہو چکا ہے کہ جنگ عظیم امریکہ کیلئے نقصان دہ ہے۔

حزب اللہ لبنان کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل نے مزید کہا کہ تین ملکی اتحاد شام پر حملے کے اپنے اہداف کو حاصل نہیں کرسکا چونکہ انہوں نے شام میں کچھ بھی تبدیل نہیں کیا۔ شام پر حملے سے پہلے ضروری اطلاعات روس تک پہنچ چکی تھیں اور اسی وجہ سے شام کے مخصوص علاقوں پر حملے کے وقت کو کئی بار تبدیل بھی کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اگرچہ ہمیں فوجی جواب دینے کی ضرورت نہیں ہے لیکن شام پر ہونے والے امریکہ، فرانس اور برطانیہ کے حملے کا فوجی جواب ہونا چاہیئے۔ شام پر پھینکے گئے 100 میزائیلوں میں سے 70 میزائیل شام کی فضائی دفاعی فورس نے مار گرائے اور یہ اس حملے کی مکمل ناکامی کا ثبوت ہے۔

شیخ نعیم قاسم نے کہا کہ واضح سی بات ہے کہ امریکہ شام کے سیاسی حل کی طرف نہیں آنا چاہتا، اس حملے کے بعد اب سیاسی حل مزید پیچیدہ ہو چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب شام کے خلاف بڑی جنگ چاہتا ہے اسی لئے خلیج فارس کے عرب ممالک نے شام کے خلاف تین ملی اتحاد کو فوجی حملے کیلئے اکسایا۔

شیخ نعیم قاسم نے کہا کہ میں عرب ممالک کی سربراہی کانفرنس کو توجہ نہیں دیتا چونکہ میرے خیال میں اس قسم کے کسی بھی اجلاس کا کوئی فائدہ نہیں رہا۔ سعودی عرب اس طرح کے اجلاس منعقد کر کے یہ چاہتا ہے کہ خطے میں اپنی حرکتوں پر پردہ ڈال سکے۔
Share/Save/Bookmark