امریکی صدر نے شام پر دوبارہ حملے کی دھمکی دے دی

امریکا پھر سے شام کو نشانہ بنائے گا:امریکی صدر
شامی حکومت نے اپنے عوام پر دوبارہ کیمیائی حملہ کیا تو امریکا پھر اسے نشانہ بنائے گا، ڈونلڈ ٹرمپ
تاریخ شائع کریں : يکشنبه ۲۶ فروردين ۱۳۹۷ گھنٹہ ۲۲:۰۰
موضوع نمبر: 324837
 
امریکی صدر نے ایک بار پھر ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر شامی حکومت نے اپنے عوام پر دوبارہ کیمیائی حملہ کیا تو جواب میں امریکا پھر سے شام کو نشانہ بنائے گا۔

بین الاقوامی نشریاتی ادارے کے مطابق امریکی صدر نے ایک بار پھر ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر شامی حکومت  نے شہریوں پر مزید کیمیائی حملے کیے تو امریکا اپنے اتحادیوں کی مدد سے شام پر دوبارہ میزائل حملہ کرنے میں ذرا بھی دیر نہیں لگائے گا جس کے لیے امریکا کی تیاریاں مکمل ہیں۔

قبل ازیں اپنی ایک ٹویٹ میں امریکی صدر نے شام پر میزائل حملے کو کامیاب مشن قرار دیتے ہوئے اپنے اتحادیوں برطانیہ اور فرانس کا شکریہ ادا کیا۔

امریکا، برطانیہ اور فرانس کی جانب سے شام پر میزائل حملے کو جہاں حلیف ممالک کیمیائی ہتھیاروں کے خاتمے کے لیے ’ضروری اقدام‘ قرار دے رہے تھے وہیں روس نے میزائل حملے کو جارحیت سے تعبیر کیا ہے۔

روس کے سفیر وسیلی نبینزیا نے اتحادی ممالک پر الزام لگایا کہ انھوں نے کیمیائی ہتھیاروں کا معائنہ کرنے والی ٹیم کی دوما میں کیمیائی گیس کے استعمال ہونے کی تحقیقات مکمل ہونے سے پہلے ہی شام پر حملہ کر دیا۔

دوسری جانب کیمیائی ہتھیاروں کی روک تھام کی عالمی تنظیم او پی سی ڈبلیو کے نمائندے اس وقت شام کے دارالحکومت دمشق میں موجود ہیں جہاں سے انہیں کیمیائی گیس کے مبینہ استعمال سے متعلق تفتیش کرنے کے لیے دوما جانا ہے تاہم اس سے قبل ہی امریکا نے اپنے حلیفوں برطانیہ اور فرانس کی مدد سے گزشتہ روز شام میں واقع کیمیائی ہتھیار کی تنصیبات اور فوجی اڈوں کو نشانہ بنایا۔

 
Share/Save/Bookmark