فلسطین کی بہادر اور غیرتمند قوم کی نجات کا واحد راستہ مزاحمت ہے:رہبر انقلاب

فلسطین عالم اسلام کا اہم مسئلہ ہے:رہبر انقلاب
عالم اسلام میں مزاحمتی فرنٹ کو مضبوط کرنا اور ناجائز صہیونی ریاست اور اس کے حامیوں کے خلاف مقابلے میں اضافہ کرنا مسئلہ فلسطین کا واحد علاج ہے:قائد اسلامی انقلاب
تاریخ شائع کریں : پنجشنبه ۱۶ فروردين ۱۳۹۷ گھنٹہ ۲۳:۱۰
موضوع نمبر: 322870
 
ایرانی سپریم لیڈر حضرت آیت اللہ خامنہ ای نے فرمایا ہے کہ عالم اسلام میں مزاحمتی فرنٹ کو مضبوط کرنا اور ناجائز صہیونی ریاست اور اس کے حامیوں کے خلاف مقابلے میں اضافہ کرنا مسئلہ فلسطین کا واحد علاج ہے.

یہ بات قائد اسلامی انقلاب حضرت آیت اللہ العظمی 'سید علی خامنہ ای' نے فلسطین کی مزاحمتی تنظیم حماس کے سربراہ اسماعیل ہنیہ کے نام ایک خط میں کہی.

حماس کے رہنما نے کچھ عرصے پہلے سپریم لیڈر کے لئے ایک مراسلہ بھیجا تھا جس کے جواب میں آیت اللہ خامنہ ای نے فرمایا کہ صہیونیوں کے جھوٹے، مکار اور غاصب حکمرانوں کے ساتھ مذاکرات کرنا ناقابل معافی اور بڑی غلطی ہوگی.

انہوں نے مزید فرمایا کہ غاصب صہیونیوں کے ساتھ مذاکرات کرنے سے فلسطینی قوم کی فتح متاثر ہوگی اور اس عمل سے نہتے فلسطینیوں کو نقصان کے سوا کچھ نہیں ملے گا.

قائد اسلامی انقلاب نے فرمایا کہ فلسطین کی حمایت کرنا واقعات اور سیاسی تبدیلیوں سے بالاتر اور ہم سب کا دینی اور انسانی فریضہ ہے جس پر اللہ کے فضل سے ماضی کی طرح عمل کرتے رہیں گے.

انہوں نے فرمایا کہ فلسطین عالم اسلام کا اہم مسئلہ ہے. اسلامی جمہوریہ ایران ماضی کی طرح اس اہم مسئلے کی حمایت جاری رکھے گا.

قائد اسلامی انقلاب نے مزید فرمایا کہ مزاحمت اور غاصبوں کے خلاف لڑائی میں اضافہ کرنا مسئلہ فلسطین کا واحد علاج ہے. فلسطین کی بہادر اور غیرتمند قوم کی نجات کا واحد راستہ مزاحمت ہے.

انہوں نے اسماعیل ہنیہ کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا کہ آپ نے اپنے خط میں امت مسلمہ کو درپیش چیلنجز، بڑے شیطان (امریکہ) کی سازشوں اور فلسطین سے بعض علاقائی عرب ممالک کی غداری کا حوالہ دیا جو آج بے نقاب ہورہے ہیں.

حضرت آیت اللہ خامنہ ای نے فرمایا کہ آپ کی ہر طرح کی حمایت کو ضروری سمجھتے ہیں. آج امت مسلہ کی عزت اور اقتدار کی بالادستی کا انحصار سامراج قوتوں اور ان کی شیطانی سازشوں کا مقابلہ کرنے میں ہے.

انہوں نے مسلم اقوام بالخصوص اسلامی اور عرب ریاستوں کے غیرتمند نوجوانوں بشمول فلسطین کے حوالے سے ذمہ داری کا احساس کرنے والی حکومتوں پر لازم ہے کہ اس عظیم فریضے کو سنجیدہ لیں اور تاریخی جد و جہد و ہوشیار کے ساتھ دشمن کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کریں.

ایرانی سپریم لیڈر نے فرمایا کہ اللہ رب العزت سے آپ تمام فلسطینی مزاحمت کاروں گروہوں اور مجاہدین کی سربلندی بالخصوص فلسطین کی فتح جو ناقابل انکار فتح، قریب آنے کے لئے دعاگو ہوں.
Share/Save/Bookmark