تقريب خبررسان ايجنسی 1 فروردين 1399 گھنٹہ 13:56 http://www.taghribnews.com/ur/news/455753/رہبر-انقلاب-اسلامی-نے-نئے-سال-کو-جھش-تولید-کا-قرار-دے-دیا -------------------------------------------------- ٹائٹل : رہبر انقلاب اسلامی نے نئے سال کو " جھش تولید " کا سال قرار دے دیا صحت کے میدان میں سرگرم مجاہدوں اور تمام زحمتکشوں کو مبارکباد پیش کی اور نئے سال کو پیداوار کی جہش اور ترقی  کے نام سے موسوم کیا -------------------------------------------------- رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے نئے سال 1399 ہجری شمسی کے آغاز اور حضرت امام موسی بن جعفر علیہ السلام کی شہادت کے باہمی تقارن کی طرف اشارہ کیا اور نئے سال کو پیداوار کی جہش کے نام سے موسوم کرتے ہوئےفرمایا متن : رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے نئے سال 1399 ہجری شمسی کے آغاز اور حضرت امام موسی بن جعفر علیہ السلام کی شہادت کے باہمی تقارن کی طرف اشارہ کیا اور نئے سال کو پیداوار کی جہش کے نام سے موسوم کرتے ہوئےفرمایا " پیداوار کی جہش کے نتیجے میں عوام کی زندگی میں تبدیلی محسوس ہونی چاہیے بین الاقوامی خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے نئے سال 1399 ہجری شمسی کے آغاز اور حضرت امام موسی بن جعفر علیہ السلام کی شہادت کے باہمی تقارن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے حضرت امام موسی کاظم کی مقدس بارگاہ میں سلام اور درود پیش کیا اور عید مبعث و عید نوروز کی مناسبت سے ایرانی قوم خاص طور پر شہیدوں، جانبازوں ، صحت کے میدان میں سرگرم مجاہدوں اور تمام زحمتکشوں کو مبارکباد پیش کی اور نئے سال کو پیداوار کی جہش اور ترقی کے نام سے موسوم کیا۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے گذشتہ سال 1398 ہجری شمسی کے شہیدوں منجملہ مدافع حرم کے شہداء، سرحدوں کے شہداء اور سرفہرست سپاہ اسلام کے عظیم شہید میجر جنرل سلیمانی ، شہید ابو مہدی المہندس اور ان کے ساتھی شہیدوں کے اہلخانہ کومبارکباد اور تعزیت پیش کی ، اسی طرح کرمان کے حادثے کے شہداء ، طیارہ حادثے کے شہداء اور صحت کے شعبہ سے منسلک شہداء کے اہلخانہ کو بھی تبریک اور تعزيت پیش کی اور گذشتہ سال " 98 13" ہجری شمسی کو مختلف نشیب و فراز کا سال قراردیتے ہوئے فرمایا: گذشتہ سال کا آغاز سیلاب سے ہوا اوراختتام کورونا پر ہوا اور سال کے دوران بھی زلزلہ اور اقتصادی پابندیوں جیسےمختلف اور گوناگون حوادث رونما ہوئے لیکن ان حوادث میں سب سے عظیم حادثہ، اسلام و ایران کے نامور اور عظیم کمانڈر شہید سلیمانی کی شہادت کا حادثہ تھا۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے فرمایا: گذشتہ سال سخت اور دشوار سال تھا اور عوام کو بھی مشکلات کا سامنا رہا ، لیکن ان سختیوں کے ساتھ بعض بے نظر سربلندیاں اور کامیابیاں بھی نصیب ہوئیں اور ایرانی قوم کی درخشندگی نمایاں رہی۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے سال کے آغاز میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں کی جانب مدد کے لئے روانہ ہونے والے مؤمن اور باہمت افراد کے ہجوم کو گذشتہ سال کے بہترین واقعات میں شمار کرتے ہوئے فرمایا: سپاہ اسلام کے عظیم کمانڈر شہید قاسم سلیمانی کی شہادت کے موقع پر تہران، قم ، اہواز، اصفہان، مشہد اور کرمان میں دسیوں ملین افراد کے اجتماعات، دنیا میں بے نظیر، تاریخی ، شاندار اور ایرانی عوام کی سربلندی عزت و عظمت اور ملک کی آبرو کا مظہر ہیں۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے کورونا کے مسئلہ میں عوام کی قابل قدر اور قابل تحسین فداکاریوں کو سن 1398 میں ایرانی قوم کی درخشندگی کا ایک اور نمونہ قراردیتے ہوئے فرمایا: ڈاکٹروں، نرسوں ، میڈیکل عملے اور شعبہ صحت سے منسلک اہلکاروں کی زحمات اور ان کے ہمراہ عوامی رضاکاروں جیسے حوزہ اور یونیورسٹی کے طلباء اور رضاکار فورس کی خدمات سبھی عزت اور آبرو کا باعث ہے۔ رہبر معظم انقلاب اسلامی نے موجودہ شرائط میں عوام کے سماجی اور اجتماعی تعاون ، صحت کے وسائل کی تقسیم ، عام جگہوں پر اسپرے ، بزرگ افراد کی مدد، کرایوں کی بخشش اور قسطوں کی وصولی کو مؤخر کرنے کے اقدامات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا: ایرانی قوم نے سخت حوادث میں اپنے فضائل اور اخلاق کے بہترین نمونے پیش کئے ہیں اور میں تمام افراد اور ان کی تمام سرگرمیوں کا دل کی گہرائی سے شکریہ ادا کرتا ہوں اور بشارت دیتا ہوں کہ اللہ تعالی کی جزا ان کے انتظار میں ہے